عنوان: روزہ رکھنے کی طاقت نہ ہو تو کیا مسنون اعتکاف ہو جائے گا؟(105011-No)

سوال: مفتی صاحب! ہماری مسجد میں ایک بزرگ اعتکاف میں بیٹھے، لیکن اعتکاف کے دوران ان کی طبیعت اس قدر خراب ہوئی کہ ان کے لیے روزہ رکھنا ممکن نہ رہا، تو کیا اس طرح بغیر روزے کے اعتکاف کرنا درست ہے یا نہیں؟

جواب: مسنون اعتکاف صحیح ہونے کے لئے روزہ شرط ہے، لہذا روزہ کے بغیر مسنون اعتکاف صحیح نہیں ہوگا، البتہ نفلی اعتکاف صحیح ہوجائے گا، کیونکہ نفلی اعتکاف کے لئے روزہ شرط نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی رد المحتار:

وشرط الصوم لصحۃ الاول اتفاقا فقط علی المذھب قولہ لصحۃ الاول ای النذر۔۔۔۔۔۔۔۔
قلت: ومقتضی ذلک ان الصوم شرط ایضاً فی الاعتکاف المسنون لانہ مقدر بالعشر الاخیر حتی لو اعتکفہ بلا صوم لمرض او سفر، ینبغی ان لا یصح عنہ بل یکون نفلا فلا تحصل بہ اقامۃ سنۃ الکفایہ۔

(رد المحتار،442/2 ط: سعید)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 327
roza rakhne / rakhney ki taqat na ho to kiaa masnoon etikaaf ho jai ga?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Aitikaf

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com