عنوان: معتکف کا جان بچانے کے لیے مسجد سے نکلنا(105012-No)

سوال: مفتی صاحب! اگر کوئی شخص مسجد میں اعتکاف کے لئے بیٹھے، اس دوران مسجد کی چھت گرنے لگے، یا کوئی شخص آگ میں یا کنویں میں گر جائے یا گرنے کا خطرہ ہو، تو اس کو بچانے کے لیے مسجد سے معتکف کا نکلنا کیسا ہے؟ اور اس کے اعتکاف کا کیا حکم ہوگا؟

جواب: اگر مسجد گرنے لگے اور معتکف کے دب جانے کا خطرہ ہو یا کوئی بچہ یا آدمی پانی کے کنویں میں گر گیا اور ڈوب رہا ہو یا آگ میں گر پڑے یا گرنے کا خطرہ ہو تو معتکف کو مسجد سے نکل جانے کا گناہ نہیں ہوگا، بلکہ جان بچانے کی غرض سے مسجد سے نکلنا واجب ہے، البتہ اعتکاف فاسد ہوجائے گا، اور ایک دن ایک رات کی قضا روزے کے ساتھ لازم ہوگی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی الشامیۃ:

وامّا ما لا یغلب کانجاء غریق وانھدام مسجد فمسقط للاثم لا للبطلان۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ وعلی ھذا اذا خرج لانقاذ غریق او حریق او جھاد عم نفیرہ فسد ولا یاثم، وکذا اذا انھدم المسجد ونص علیہ فی الخانیۃ وغیرھا۔۔۔۔۔۔۔

(شامی، 447،448/2، ط: سعید)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 250
motakif / mutakif ka jaan bachane / bachaney ke / key leye / lie masjid se / sey nikalna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Aitikaf

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com