عنوان: معتکف کا ڈاکٹر کے پاس جانا(105013-No)

سوال: اگر اعتکاف میں بیٹھنے کے بعد معتکف کی طبیعت خراب ہو جائے، تو وہ ڈاکٹر کے پاس جا سکتا ہے؟

جواب: اگر معتکف اس قدر بیمار ہو کہ ڈاکٹر کے پاس جائے بغیر کوئی چارہ نہ ہو، اور وہ مسجد سے نکل کر ڈاکٹر کے پاس چلا جائے، تو اعتکاف فاسد ہوجائے گا، قضا لازم ہوگی، البتہ گناہ نہیں ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی الخلاصۃ:

ولو خرج بعذر فعلی ھذا الخلاف ومن الاعذار المرض الا انہ لایاثم اذا کان الخروج بعذر ومن الاعذار انھدام المسجد او اخرجہ سلطان کرھاً او اخرجہ الغریم … فسداعتکافہ فی قول ابی حنیفۃ قال الامام السرخسی وقولھما ایسر علی المسلمین… ولو خرج المعتکف بغیر عذر ناسیاً فسد اعتکافہ اذا کان ساعۃ او نصف یوم عندھما۔

(خلاصۃ الفتاویٰ 268/1)


کذا فی البحر الرائق:

فان خرج ساعۃ بلا عذر فسد لوجود المنافی الی قولہ الخروج ناسیا او مکرہا غیر مفسد لکونہ عذرا شرعیا ولیس کذلک بل ہو مفسد کما صرحوا بہ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

(البحر الرائق، 302،303/2 ط: سعید)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 472
motakif / mutakif ka doctor / mualij / daactar key / ke paas jana

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Aitikaf

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com