عنوان: رخصتی سے قبل طلاق کی صورت میں حق مہر کا حکم(5463-No)

سوال: السلام علیکم،
مفتی صاحب! ایک لڑکی کا نکاح ہوگیا ہے، اس لڑکی کا حق مہر 15 تولے سونا ہے، اب شادی سے پہلے لڑکے نے انکار کردیا ہے، اب اس لڑکے کو سونا دینا ہوگا کہ نہیں؟

جواب: رخصتی سے پہلے طلاق کی صورت میں شوہر پر نصف مہر کی ادائیگی لازم ہوتی ہے، لہذا صورت مسئولہ میں اگر نکاح کے وقت لڑکا مہر کی مقدار پر راضی تھا، اور اس نے رخصتی سے پہلے طلاق دیدی، تو اس پر آدھا مہر دینا شرعاً لازم ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (البقرة، الایة: 237)
وَإِن طَلَّقْتُمُوهُنَّ مِن قَبْلِ أَن تَمَسُّوهُنَّ وَقَدْ فَرَضْتُمْ لَهُنَّ فَرِيضَةً فَنِصْفُ مَا فَرَضْتُمْ إَلاَّ أَن يَعْفُونَ أَوْ يَعْفُوَ الَّذِي بِيَدِهِ عُقْدَةُ النِّكَاحِ....الخ

رد المحتار: (385/2)
"ویجب نصفہ لطلاق قبل وطأ أو خلوۃ".

مجمع الأنھر: (346/1، ط: دار الکتب العلمیة)
"ولزم نصفہ أي المسمیٰ بالطلاق قبل الدخول، وقبل الخلوۃ الصحیحۃ".

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1027 Oct 19, 2020
rukhsati say qabal talaq ki soorat mai haq meher ka hukum, Order of meher / mahar in case of divorce before rukhsati / departure

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.