عنوان: دودھ پیتے بچے کو کسی عورت کا خون چڑھانے سے رضاعت ثابت نہیں ہوتی(105569-No)

سوال: مفتی صاحب میرا سوال یہ ہے کیا دودھ پیتے بیمار بچے کو کسی عورت کا خون چڑھانے سے رضاعت ثابت ہوتی ہے؟

جواب: واضح رہے کہ حرمت رضاعت مدت رضاعت میں (ڈھائی سال کے اندر) صرف دودھ پلانے سے ثابت ہوتی ہے، لہذا دودھ پیتے بچے کو کسی عورت کا خون چڑھانے سے رضاعت ثابت نہیں ہوگی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما فی الدرالمختار:

ﺑﺎﺏ اﻟﺮﺿﺎﻉ (ﻫﻮ) ﻟﻐﺔ ﺑﻔﺘﺢ ﻭﻛﺴﺮ: ﻣﺺ اﻟﺜﺪﻱ. ﻭﺷﺮﻋﺎ (ﻣﺺ ﻣﻦ ﺛﺪﻱ ﺁﺩﻣﻴﺔ) ﻭﻟﻮ ﺑﻜﺮا ﺃﻭ ﻣﻴﺘﺔ ﺃﻭ ﺁﻳﺴﺔ، ﻭﺃﻟﺤﻖ ﺑﺎﻟﻤﺺ اﻟﻮﺟﻮﺭ ﻭاﻟﺴﻌﻮﻁ (ﻓﻲ ﻭﻗﺖ ﻣﺨﺼﻮﺹ) ﻫﻮ (ﺣﻮﻻﻥ ﻭﻧﺼﻒ ﻋﻨﺪﻩ ﻭﺣﻮﻻﻥ) ﻓﻘﻂ (ﻋﻨﺪﻫﻤﺎ ﻭﻫﻮ اﻷﺻﺢ) ﻓﺘﺢ ﻭﺑﻪ ﻳﻔﺘﻰ ﻛﻤﺎ ﻓﻲ ﺗﺼﺤﻴﺢ اﻟﻘﺪﻭﺭﻱ ﻋﻦ اﻟﻌﻮﻥ، ﻟﻜﻦ ﻓﻲ اﻟﺠﻮﻫﺮﺓ ﺃﻧﻪ ﻓﻲ اﻟﺤﻮﻟﻴﻦ ﻭﻧﺼﻒ۔۔۔

(ج:٣،ص:٣٠٩، ط: دار الفكر )

كذا فى جواهر الفقه:

(ج:٧، ص:٥٠، ط: مكتبة دار العلوم كراتشي )

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 419
dodh pitay bachy ko kisi aourat ka khoon charhanay say razaat saabit nahi hoti

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Fosterage

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com