عنوان: چار مختلف قسمیں توڑنے کی صورت میں چار کفارے واجب ہوں گے(5811-No)

سوال: مفتی صاحب! میں نے مختلف موقعوں پر مختلف چار قسمیں کھائی تھیں کہ بخدا میں یہ کام نہیں کروں گا، یا میں یہ کام ضرور کروں گا، لیکن میں چاروں قسموں میں سے ایک قسم بھی پوری نہ کرسکا، اور مجھ سے چاروں ٹوٹ گئیں، اب سوال یہ ہے کہ کیا میرے ذمہ چار قسموں کا ایک ہی کفارہ ادا کرنا واجب ہے، یا چار کفارے ادا کرنا ضروری ہیں؟

جواب: واضح رہے کہ ہر قسم کے بدلے ایک کفارہ واجب ہوتا ہے، لہذا آپ کے ذمہ مختلف موقعوں پر کھائی ہوئی مختلف چار قسمیں توڑنے کی وجہ سے چار کفارے ادا کرنا لازم ہے، اور ہر قسم کا کفارہ یہ ہے کہ دس مسکینوں کو دو وقت کا کھانا کھلائیں، یا دس مسکینوں میں سے ہر ایک کو ایک ایک جوڑا کپڑا پہنائیں، اور اگر اس کی طاقت نہ ہو، تو تین دن کے مسلسل روزے رکھیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

البحر الرائق: (316/4، ط: دار الکتاب الاسلامی)

ويتعدد اليمين بتعدد الاسم لكن يشترط تخلل حرف القسم....وفي التجريد عن أبي حنيفة إذا حلف بأيمان فعليه لكل يمين كفارة والمجلس والمجالس سواء۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 860
char / four mukhtalif / mukhtalef qasmain / qasme torne / torney me / mey char / four kaffare / kafarey wajib ho ge / gey

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Ruling of Oath & Vows

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.