عنوان: کیا نفاس کی حالت میں ہمبستری کرنے سے نکاح پر کوئی اثر پڑے گا؟(6035-No)

سوال: میری بیوی نفاس کی حالت میں تھی، اور اس کی عادت چالیس دن ہے، اس دوران شہوت کے غلبہ کی وجہ سے مجھ سے صبر نہ ہوسکا، اور میں نے اسی حالت میں بیوی سے ہمبستری کرلی، سوال یہ ہے کہ اس سے نکاح پر کوئی اثر تو نہیں پڑے گا؟

جواب: واضح رہے کہ بیوی اگر نفاس کی حالت میں ہو، تو اس سے ہمبستری کرنا حرام اور گناہِ کبیرہ ہے، لہذا آپ پر لازم ہے کہ اس گناہ پر توبہ و استغفار کریں، اور ہوسکے تو استطاعت کے مطابق صدقہ بھی دیں، البتہ اس سے آپ کے نکاح پر کوئی اثر نہیں پڑے گا، اور آپ کا نکاح بدستور برقرار ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

البحر الرائق: (197/1، ط: سعید)
ويمنع الحيض قربان زوجها ماتحت ازارها اما حرمة وطئها عليه فمجمع عليها ............ووطؤها في الفرج عالما بالحرمة عامدا مختارا كبيرة لا جاهلا ناسيا ولا مكرها فليس عليه الا التوبة والاستغفار.. ويستحب أن يتصدق بدينار او نصفه.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 697 Dec 07, 2020
kia nifas ki halat mai hambistari karne say nkkah par koi asar parayga?, Will intercourse in the state of nifas / postpartum affect the marriage?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.