عنوان: لے پالک بیٹی کو گلے لگانے سے حرمت مصاہرت کا حکم(6050-No)

سوال: میری پندرہ سالہ لے پالک بیٹی نے مجھے گلے لگایا، جس سے بے اختیار شہوت پیدا ہوئی، اور عضو میں ہلکی سی سختی آئی، کیا حرمتِ مصاہرت ثابت ہوگئی؟

جواب: واضح رہے کہ حرمت مصاہرت کے ثبوت کے لیے چند شرائط ہیں:
1)۔ جس عورت کو شہوت کے ساتھ چھوا ہے وہ مشتھاۃ (قابل شہوت) ہو، یعنی کم از کم نو سال کی ہو۔
2)۔ اس عورت کو چھوتے وقت ہی شہوت پیدا ہو، بعد میں شہوت پیدا ہونا معتبر نہیں ہے۔
3)۔ شہوت پیدا ہونے کی کوئی معتبر علامت پائی جائے، اور اگر پہلے سے شہوت موجود ہو تو چھوتے وقت شہوت میں مزید اضافہ ہو جائے۔
4)۔ شہوت کے ساتھ چھونا اس طور پر ہو کہ درمیان میں کوئی کپڑا وغیرہ حائل نہ ہو، اگر درمیان میں کوئی کپڑا حائل ہو تو اس قدر باریک ہو کہ جسم کی حرارت پہنچنے سے مانع نہ ہو، ورنہ حرمت مصاہرت ثابت نہیں ہوگی۔
اس ساری تفصیل کے بعد صورت مسئولہ میں لے پالک بیٹی کو شہوت کے ساتھ گلے لگانے سے حرمت مصاہرت اس طور پر ثابت ہو جائے گی کہ آپ پر لے پالک بیٹی کے اصول و فروع حرام ہو جائیں گے، اور لے پالک بیٹی پر آپ کے اصول و فروع حرام ہو جائیں گے، لہذا آپ کے لیے اپنی لے پالک بیٹی کو شہوت کے ساتھ گلے لگانا ناجائز اور حرام ہے، اس پر توبہ و استغفار کرنا لازم ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھندیۃ: (275/1)
"ویشترط أن تکون المرأة مشتهاةً ، والفتویٰ علی أن بنت تسع محل الشهوة لا ما دونها، کذا في معراج الدرایة. وحکي عن الشیخ الإمام أبی بکر أنه کان یقول: ینبغي للمفتي أن یفتي في السبع والثماني أنها لاتحرم، إلا أن بالغ السائل أنها عبلة ضخمة جسیمة، فحینئذٍ یفتی بالحرمة، کذا في الذخیرة والمضمرات".

و فیھا ایضاً: (375/1)
"ثم المسّ إنما یوجب حرمة المصاهرة إذا لم یکن بینهما ثوبٌ ، أما إذا کان بینهما ثوب فإن کان صفیقاً لا یجد الماس حرارة الممسوس لا تثبت حرمة المصاهرة وإن انتشرت آلته بذلك، وإن کان رقیقاً بحیث تصل حرارة الممسوس إلی یده تثبت، کذا في الذخیرة".

و فیها أیضاً: (275/1)
"والشهوة تعتبر عند المس والنظر حتیٰ لو وجدا بغیر شهوة ثم اشتهیٰ بعد الترك لاتتعلق به الحرمة".

مجمع الانھر: (328/1)
"والمختار أن لاتثبت بناءً علی أن الأمر موقوف حال المسّ إلی ظهور عاقبته، إن ظهر أنه لم ینزل حرمت، وإلا فلا، کما في الفتح".


رد المحتار: (33/3، ط: دار الفکر)
"(وأصل ماسته وناظرة إلى ذكره والمنظور إلى فرجها) المدور (الداخل) ولو نظره من زجاج أو ماء هي فيه (وفروعهن ( مطلقًا، والعبرة للشهوة عند المس والنظر لا بعدهما، وحدها فيهما تحرك آلته أو زيادته، به يفتى".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 839 Dec 07, 2020
lay palak beti ko galay laganay say hurmat e musaharat ka hukum, The order of hurmat e musaharat by hugging the adopted daughter

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.