عنوان: نامرد سے طلاق کی صورت میں عدت کا حکم(106409-No)

سوال: اگر کوئی شخص نامرد ہو اور اس کو اپنی نامردی کا اعتراف بھی ہو، اس کی بیوی اور اس میں علیحدگی ہوجائے، تو کیا اس عورت پر عدت واجب ہوگی؟

جواب: صورت مسئولہ میں اگر زوجین میں خلوت صحیحہ یعنی تنہائی ہوچکی تھی، تو عورت پر طلاق کے بعد عدت لازم ہے، اگرچہ زوجین میں صحبت نہ ہوئی ہو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما فی فی الھندیۃ (۳۰۵/۱):

وخلوة المجبوب خلوة صحيحة عند أبي حنيفة رحمه الله تعالى وخلوة العنين والخصي خلوة صحيحة كذا في الذخيرة۔

(ج:1، ص:305)

کذا فی الدر المختار مع الرد المحتار:

والخلوۃ بلامانع حسي وطبعي وشرعي…… ولوکان الزوج مجبوبا أوعنینا أوخصیا في ثبوت النسب وفي تأکد المہر والنفقۃ والسکنی والعدۃ

(ج:4، ص:114/ 118، کتاب النکاح، باب المہر)

واللہ تعالی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 345
Namard sae talaq ki surat main Idaat ka hukum, Ruling for Idaat from a emasculated person

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Iddat(Period of Waiting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © AlIkhalsonline 2021.