عنوان: سولہ سال کی عمر کا لڑکا جس کی داڑھی نہ آئی ہو٬ اس کے پیچھے تراویح پڑھنا(107066-No)

سوال: مفتی صاحب ! ایک بچہ جس کی عمر سولہ سال ہے، لیکن ابھی تک اس کی داڑھی مونچھ نہیں آئی، کیا وہ مسجد میں تراویح کی جماعت کراسکتا ہے؟

جواب: پندرہ سال کی عمر میں لڑکا شرعی طور پر بالغ شمار ہوتا ہے٬ اگرچہ بلوغ کی کوئی علامت ظاہر نہ ہوئی ہو٬ لہذا مذکورہ صورت میں لڑکا شرعا بالغ ہے٬ اس لئے اس کے پیچھے تراویح اور فرض نماز وغیرہ پڑھنا درست ہے٬ اگرچہ اس کی ابھی داڑھی نہ آئی ہو۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


لما فی الفتاویٰ الہندیۃ:

"بلوغ الغلام بالاحتلام أو الاحبال او الانزال والجاریۃ بالاحتلام او الحیض او الحبل کذا فی المختار: والسن الذی یحکم ببلوغ الغلام والجاریۃ اذا انتھیا الیہ خمس عشرۃ سنۃ عند ابی یوسف ومحمد رحمہما اللّٰہ تعالیٰ وھو روایۃ عن ابی حنیفۃؒ وعلیہ الفتویٰ "

(ج۵،ص؍۶۱، الباب الثانی فی الحجر، الفصل الثانی فی معرفۃ البلوغ)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 249
soola saal ki umer ka larka jis ki dhaari na aati ho us kay pichy taraweeh parhna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Taraweeh Prayers

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.