عنوان: مہر یاد نہ ہو تو کیا حکم ہے؟ (7167-No)

سوال: حضرات مفتیان کرام ! اب سے تقریباً ساٹھ 60 سال پہلےنکاح ہوا تھا، معلوم نہیں ہے کہ مہر پیسوں کی صورت میں طے ہوا تھا یا سونے چاندی کی صورت میں طے ہوا تھا، اب اس کی اداٸیگی کا طریقہ کیا ہوگا؟

جواب: صورت مسئولہ میں اگر کسی کو بھی مہر کی رقم یاد نہ ہو، تو اب باہمی رضامندی سے آپس میں کوئی بھی مہر طے کیا جاسکتا ہے، ورنہ پھر مہر مثل بھی دیا جاسکتا ہے، مہر مثل سے مراد لڑکی کے باپ کی طرف کی عورتیں، مثلاً لڑکی کی بہن، پھوپھی وغیرہ کے مہر کے بقدر دیا جاسکتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھدایہ: (325/2)
وإن تزوجہا ولم یسم لہا مہراً ثم تراضیا علی تسمیۃ فہي لہا۔

القدوری: (ص: 215)
وان تزوجھا ولم یسم لھا مھرا أو تزوجھا علی أن لا مھرلھا فلھا مھر مثلھا ان دخل بھا أو مات عنھا۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 989 Mar 27, 2021
meher yaad na ho tw kia hukum hai?, If someone does not remember the mahar / meher, what is the ruling?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.