عنوان: بچوں پر روزے کب فرض ہوتے ہیں؟(7357-No)

سوال: مفتی صاحب! بچہ پر کس عمر میں روزہ فرض ہوتا ہے؟

جواب: شریعت کے احکامات نماز، روزے وغیرہ بالغ ہونے کے بعد ہی مسلمان پر فرض ہوتے ہیں، البتہ بالغ ہونے سے پہلے اگر بچوں میں روزہ رکھنے کی استعداد ہو، تو ان کو بھی کبھی کبھی روزے رکھوانے چاہیے، تاکہ بلوغت سے پہلے ان کو روزے سے کچھ انسیت پیدا ہوجائے، اور بالغ ہونے کے بعد فرض روزہ رکھنے میں کوئی دشواری پیش نہ آئے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

سنن ابی داؤد: (71/1)
عن عمروبن شعیب عن ابیہ عن جدہ قال قال رسول اللہ ﷺ مروااولادکم بالصلاۃ وھم ابناء سبع سنین واضربوھم علیھاوھم ابناء عشروفرقوا بینھم فی المضاجع۔

الدر المختار: (کتاب الصلاة، 5/2، ط: زکریا)
والصوم کالصلاة علی الصحیح کما في صوم القھستاني معزیاً للزاھدي، وفي حظر الاختیار أنہ یوٴمر بالصوم والصلاة وینھی عن شرب الخمر لیألف الخیر ویترک الشر۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1634 Apr 24, 2021
bacho par rozay kab farz hotay hain?, When is fasting obligatory for children?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sawm (Fasting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.