عنوان: وعظ و نصیحت کے لیے دن مقرر کرنا(7467-No)

سوال: ہمارے علاقہ کی مسجد میں ہر اتوار کو درس حدیث ہوتا ہے، بعض مقتدی حضرات کہتے ہیں کہ درس حدیث کے لیے دن بدلتے رہنا چاہیے، کیونکہ وعظ و نصیحت کے لیے دن مقرر کرنا بدعت ہے؟

جواب: روایت میں ہے کہ حضرت عبد اللہ بن مسعودؓ ہر جمعرات کو لوگوں کو وعظ و نصیحت کیا کرتے تھے۔(صحیح بخاری، حدیث نمبر:70) لہذا وعظ و نصیحت کے لیے انتظامی طور پر دن مقرر کرنا بدعت نہیں ہے، بشرطیکہ اسے لازم یا سنت نہ سمجھا جائے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحیح البخاری: (رقم الحدیث:70)
عن ابی وائل قال کان عبد ﷲ یذکر الناس فی کل خمیس فقال لہ رجل یا اباعبد ﷲ لوددت انک لو ذکرتنا کل یوم قال اما انہ یمنعنی من ذلک انی اکرہ ان املکم وانی اتخولکم بالموعظۃ کما کان النبی ﷺ یتخولنا بھا مخافۃ السامۃ علینا۔

فیض الباری: (170/1)
ان ھذہ التعینات لاتعد بدعۃ والبدعۃ عندی ما لاتکون مستندۃ الی الشرع و تکون ملتبسۃ بالدین۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1326 May 11, 2021
kia waaz o naseehat kay liye din muqarrar karna biddat hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Bida'At & Customs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.