عنوان: خطبۂ نکاح ایجاب و قبول سے پہلے پڑھنا چاہیے یا بعد میں؟(7541-No)

سوال: مفتی صاحب ! خطبۂ نکاح ایجاب و قبول سے پہلے پڑھنا چاہیے یا بعد میں پڑھنا چاہیے، وضاحت فرما دیں؟

جواب: نکاح کا سنت طریقہ یہ ہے کہ پہلے خطبۂ نکاح پڑھا جائے اور اس کے بعد ایجاب و قبول کیا جائے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

اعلاء السنن: (82/11)
عن رجل من بنی سلیم قال: خطبت الی النبی صلی الله علیہ وسلم امامۃ بنت عبدالمطلب، فانکحنی من غیران یتشھد فدل ذلک علی جواز النکاح بغیر خطبۃ مع عدم الکراھۃ فالخطبۃ لہ مستحبۃ۔

الدر المختار: (8/3)
ویندب اعلانہ وتقدیم خطبۃ وکونہ فی مسجد یوم جمعۃ بعاقد رشید وشھود عدول۔

الفقہ الاسلامی و ادلته: (6616/9)
يستحب للزواج ما يأتي :أن يخطب الزوج قبل العقد عند التماس التزويج خُطبة مبدوءة بالحمد لله والشهادتين، والصلاة على رسول الله ﷺ ، مشتملة على آية فيها أمر بالتقوى وذكر المقصود، عملاً بخطبة ابن مسعود۔۔۔ فإن عقد الزواج من غير خطبة جاز،فالخطبة مستحبة غير واجبة۔

نجم الفتاوی: (222/4)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 2508 May 19, 2021
khutba e nikkah eijab o qubool say pehle parhan chahiye ya baad mai ?, Should the marriage sermon be recited before the proposal and acceptance or after it?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.