عنوان: بیوی کے انتقال کے بعد حقیقی سالی سے فوراََ نکاح کرنے کا حکم(7572-No)

سوال: اگر کسی شخص کی بیوی کا انتقال ہوجائے اور وہ شخص بیوی کی بہن سے نکاح کرنا چاہے، تاکہ وہ بچوں کو سنبھال سکے، تو کیا اس سے نکاح جائز ہے اور اگر جائز ہے، تو کیا فوراً نکاح کرسکتا ہے یا نکاح کرنے سے پہلے کچھ مدت انتظار کرنا پڑے گا، جیسے عدت وغیرہ، براہ مہربانی وضاحت فرمادیں؟

جواب: بیوی کے انتقال کے بعد حقیقی سالی سے فوراََ نکاح کرنا جائز ہے اور اس کے لئے کسی مدت کے انتظار کی ضرورت نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (النساء، الآیۃ: 24)
وَاُحِلَّ لَكُم مَّا وَرَاءَ ذٰلِكُمْ اَنْ تَبْتَغُوْا بِأَمْوَالِكُمْ مُّحْصِنِيْنَ غَيْرَ مُسَافِحِيْنَ۔۔۔۔الخ

رد المحتار: (38/3، ط: دار الفکر)
ماتت امرأته له التزوج بأختها بعد يوم من موتها كما في الخلاصة عن الأصل وكذا في المبسوط لصدر الإسلام والمحيط والسرخسي والبحر والتاترخانية وغيرها من الكتب المعتمدة وأما ما عزي إلى النتف من وجوب العدة فلا يعتمد عليه وتمامه في كتابنا تنقيح الفتاوى الحامدية۔

الفتاوی الھندیۃ: (179/1، ط: دار الفکر)
ويجوز لزوج المرتدة إذا لحقت بدار الحرب تزوج أختها قبل انقضاء عدتها كما إذا ماتت۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1026 May 20, 2021
biwi kay intiqal kay baad haqiqi saali say foran nikkah karne ka hukum, The order to immediately marry the real sister-in-law after the death of the wife

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.