عنوان: حالت حیض میں عورت کا جائے نماز پر بیٹھنے کا شرعی حکم(107582-No)

سوال: مفتی صاحب! کیا عورت حالت حیض میں جائے نماز پر بیٹھ سکتی ہے؟ کئی لوگ اسے ناجائز سمجھتے ہیں؟ رہنمائی فرمائیں۔

جواب: واضح رہے کہ اگر جائے نماز کے گندا ہونے کا اندیشہ نہ ہو تو حالت حیض میں عورت جائے نماز پر بیٹھ سکتی ہے۔ اسے ناجائز سمجھنا درست نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا في سنن الترمذی :

حدثنا قتيبة، قال: حدثنا عبيدة بن حميد، عن الأعمش، عن ثابت بن عبيد عن القاسم بن محمد، قال: قالت
عائشة: قال لي رسول الله صلى الله عليه وسلم : ناوليني الخمرة من المسجد، قالت: قلت: إني حائض، قال: إن حيضتك ليست في يدك.

( باب ما جاء في الحائض، ج :1، ص : 40، رقم الحديث : 134، ط : قدیمی کتب خانه )

کذا فی الفتاوی الھندیۃ :

ﻭﻳﺴﺘﺤﺐ ﻟﻠﺤﺎﺋﺾ ﺇﺫا ﺩﺧﻞ ﻭﻗﺖ اﻟﺼﻼﺓ ﺃﻥ ﺗﺘﻮﺿﺄ ﻭﺗﺠﻠﺲ ﻋﻨﺪ ﻣﺴﺠﺪ ﺑﻴﺘﻬﺎ ﺗﺴﺒﺢ ﻭﺗﻬﻠﻞ ﻗﺪﺭ ﻣﺎ ﻳﻤﻜﻨﻬﺎ ﺃﺩاء اﻟﺼﻼﺓ ﻟﻮ ﻛﺎﻧﺖ ﻃﺎﻫﺮﺓ.

(ج : 1، ص : 38، ط : دارالفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 298
halat e haiz mai aourat ka jaaye namaz par bethnay ka shar'ee hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Women's Issues

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.