عنوان: بیمار آدمی اگر رمضان ہی میں انتقال کرجائے، تو اس کے روزوں کی قضاء اور فدیہ کا حکم(7602-No)

سوال: میرے نانا ابو کا اس رمضان المبارک میں انتقال ہوا ہے اور وہ گزشتہ دو ماہ سے بیمار تھے، روزہ رکھنے کی قدرت نہیں تھی، کیا انکے طرف سے اس رمضان المبارک کے روزوں کا فدیہ ادا کرنا ہوگا یا نہیں؟

جواب: صورت مسئولہ میں اگر آپ کے نانا کا انتقال ایسی بیماری سے ہوا ہے، جس میں انہیں روزے رکھنے کی قدرت نہیں تھی، اور انہیں اتنی مدت نہیں ملی جس میں وہ ان فوت شدہ روزوں کی قضاء کرسکیں، تو ان پر اس بیماری میں قضاء ہونے والے روزوں کی قضاء لازم نہیں ہے، اور نہ ہی ان روزوں کے بدلے فدیہ دینا لازم ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الھدایہ: (239/1، ط: مکتبہ رحمانیہ)
و إذا مات المریض و المسافر، و ھما علی حالھما، لم یلزمہما القضاء، و لو صح المریض و اقام المسافر ثم ماتا لزمہما القضاء بقدر الصحۃ و الاقامہ، لوجود الادراک بھذا القدر، و فائدتہ وجوب الوصۃ بالاطعام۔

الفتاوی الھندیۃ: (208/1، ط: مکتبہ رشیدیہ)
و لو فات صوم رمضان بعذر المرض او السفر، و استدام المراض و السفر حتی مات لا قضاء علیہ، لکنہ ان اوصی بان یطعم عنہ، صحت وصیته، و ان لم تجب علیہ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 1598 May 22, 2021
beemar aadmi agar ramzan himai intiqal kar jaye to uskay rozon ki qaza or fidye ka hukum, If a sick person dies in Ramadan, then ruling on qaza and fidya of his fasts

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sawm (Fasting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.