عنوان: کیا رمضان کے روزوں کی قضاء لگاتار کرنا ضروری ہے یا درمیان میں وقفہ کرسکتے ہیں؟(7608-No)

سوال: ایک شخص رمضان المبارک کے روزے نہ رکھ سکا ، اب قضاء کرنا چاہ رہا ہے، کیا 30 روزے لگاتار رکھنا ضروری ہے؟

جواب: رمضان المبارک کے قضاء روزوں کے درمیان وقفہ کرنا جائز ہے، لگاتار رکھنا ضروری نہیں ہے، البتہ مستحب یہ ہے کہ درمیان میں وقفہ نہ کیا جائے تاکہ ذمہ سے جلد از جلد بری ہو سکے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (البقرہ، الآیۃ: 286)
اَیَّامًا مَّعْدُوْدٰتٍؕ-فَمَنْ كَانَ مِنْكُمْ مَّرِیْضًا اَوْ عَلٰى سَفَرٍ فَعِدَّةٌ مِّنْ اَیَّامٍ اُخَرَؕ۔۔۔۔الخ

الھدایہ: (240/1، ط: مکتبہ رحمانیہ)
وقضاء رمضان ان شاء فرقہ، و ان شاء تابعہ، لاطلاق النص، لکن المستحب المتابعۃ، مسارعۃ الی اسقاط الواجب۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 910 May 22, 2021
kia ramzan kay rozon ki qaza lagatar karna zaroori hai ya darmiyan mai waqfa karsaktay hain?, Is it necessary to qaza / make up the fasts of Ramadan continuously or can there be a break in between?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sawm (Fasting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.