عنوان: عدالت کی طرف سے بے گناہ قتل ہونے والے شخص کو غسل اور کفن دینے کا حکم(107621-No)

سوال: اگر عدالت بے گناہ شخص کو کسی کے قتل کے الزام میں گرفتار کرکے سزائے موت دے دے، تو کیا وہ شخص شہید کہلائے گا اور کیا اسے غسل اور کفن دیا جائے گا یا نہیں؟

جواب: اگر حاکمِ وقت یا قاضی کسی بے گناہ شخص کو ناحق قتل کروادے، تو ایسا شخص آخرت کے لحاظ سے شہید کہلائے گا اور اسے غسل اور کفن دیا جائے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الھندیۃ:

وھو فی الشرع من قتلہ أھل الحرب والبغی وقطاع الطریق او وجد فی معرکۃ وبہ جرح او یخرج الدم من عینہ أو اذنہ او جوفہ… او قتلہ مسلم ظلماً ولم تجب بہ دیۃ وکذا ان قتلہ أھل الذمۃ او المستأمنون۔۔۔۔ومن قتل مدافعاً عن نفسہ او مالہ او عن المسلمین او أھل الذمۃ بأی آلۃ قتل بحدید او حجر او خشب فھو شھید۔

(ج: 1، ص: 167، ط: دار الفکر)

وفی الفقہ الاسلامی:

والخلاصۃ، إن کل من مات بسبب مرض أو حادث أو دفاع عن النفس أو نقل من قلب المعرکۃ حیّاً أو مات فی اثناء الغربۃ أو طلب العلم أو لیلۃ الجمعۃ، فھو شھید الاخرۃ وحکم ھؤلاء الشھداء فی الدنیا، أی شھداء الاخرۃ، أن الواحد منھم یغسل، ویکفن ویصلی علیہ اتفاقاً کغیرہ من الموتی، أما فی الاخرۃ فلہ ثواب الاخرۃ فقط، ولہ أجر الشھداء یوم القیامۃ۔

(ج: 2، ص: 1590، ط: دار الفکر)

کذا فی نجم الفتاوی:

(ج: 2، ص: 752)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 81

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Funeral & Jinaza

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com