عنوان: بیوی کے نکاح میں ہوتے ہوئے سالی کی لڑکی سے نکاح کرنے کا حکم(7667-No)

سوال: مفتی صاحب ! میری بیوی حیات ہے اور میں اپنی سالی کی لڑکی سے نکاح کرنا چاہتا ہوں، کیا میں اپنی سالی کی لڑکی سے نکاح کرسکتا ہوں؟

جواب: واضح رہے کہ سالی کی لڑکی آپ کی بیوی کی بھانجی ہے اور آپ کی بیوی اس کی خالہ ہے اور حدیث شریف میں عورت اور اس کی خالہ کو نکاح میں جمع کرنے سے منع کیا گیا ہے، لہذا آپ کے لئے بیوی کے نکاح میں ہوتے ہوئے سالی کی لڑکی سے نکاح کرنا جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

صحیح البخاری: (باب لا تنكح المرأة على عمتها، 12/7، ط: دار طوق النجاۃ)
عن أبي هريرة رضي الله عنه: أن رسول الله صلى الله عليه وسلم قال: «لا يجمع بين المرأة وعمتها، ولا بين المرأة وخالتها»

الدر المختار مع رد المحتار: (38/3، ط: دار الفکر)
حرم الجمع ( وطأ بملك يمين بين امرأتين أيتهما فرضت ذكرا لم تحل للأخرى ) أبدا لحديث مسلم لا تنكح المرأة على عمتها۔
( قوله:وأيتهما فرضت إلخ) أي أية واحدة منهما فرضت ذكرا لم يحل للأخرى كالجمع بين المرأة وعمتها أو خالتها والجمع بين الأم والبنت نسبا أو رضاعا وكالجمع بين عمتين أو خالتين كأن يتزوج كل من رجلين أم الآخر فيولد لكل منهمابنت فيكون كل من البنتين عمة الأخرى أو يتزوج كل منهما بنت الآخر ويولد لهما بنتان فكل من البنتين خالة الأخرى كما في البحر ۔۔۔ قوله (لا تنكح المرأة على عمتها) تمامه ولا على خالتها ولا على ابنة أخيها ولا على ابنة أختها۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 690 May 28, 2021
biwi kay nikkah mai hotay hoye saali ki larki say nikkah karne ka hukum, The / ruling / order to marry a sister-in-law's daughter while the wife is still married

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.