عنوان: بھائی کے انتقال کے بعد اس کی بیوی سے نکاح کرنے کا حکم(7685-No)

سوال: مفتی صاحب ! میرے شادی شدہ بھائی کا انتقال ہوچکا ہے اور گھر والے چاہ رہے ہیں کہ میں اس کی بیوی سے نکاح کرلوں، سوال یہ ہے کہ کیا بھائی کے انتقال کے بعد اس کی بیوی سے نکاح کرسکتا ہوں؟

جواب: مرحوم بھائی کی بیوی سے عدت گزرنے کے بعد نکاح کرنا جائز ہے، اور بیوہ عورت کی عدت اگر حاملہ ہو، تو وضعِ حمل (بچہ جننا) ہے اور اگر حاملہ نہ ہو، تو عدتِ وفات چار ماہ دس دن ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (البقرۃ، الآیۃ: 234)
وَالَّذِيْنَ يُتَوَفَّوْنَ مِنكُمْ وَيَذَرُوْنَ اَزْوَاجًا يَّتَرَبَّصْنَ بِاَنْفُسِهِنَّ اَرْبَعَةَ اَشْهُرٍ وَّعَشْرًا۔ فَإِذَا بَلَغْنَ اَجَلَهُنَّ فَلَا جُنَاحَ عَلَيْكُمْ فِيمَا فَعَلْنَ فِيْ اَنفُسِهِنَّ بِالْمَعْرُوفِ وَاللهُ بِمَا تَعْمَلُوْنَ خَبِيْرٌo

و قولہ تعالی: (الطلاق، الآیۃ: 4)
وَاُوْلَاتُ الاَحْمَالِ اَجَلُهُنَّ اَن يَّضَعْنَ حَمْلَهُنَّ وَمَن يَّتَّقِ اللهَ يَجْعَل لَّهٗ مِنْ اَمْرِهٖ يُسْرًاo

رد المحتار: (510/3، ط: دار الفکر)
(و) العدة (للموت أربعة أشهر) بالأهلة لو في الغرة كما مر (وعشرة) من الأيام بشرط بقاء النكاح صحيحا إلى الموت (مطلقا) وطئت أو لا ولو صغيرة أو كتابية تحت مسلم ولو عبدا فلم يخرج عنها إلا الحامل ۔۔۔ (و) في حق (الحامل) مطلقا ولو أمة أو كتابية أو من زنا بأن تزوج حبلى من زنا ودخل بها ثم مات أو طلقها تعتد بالوضع۔۔الخ

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 744 May 28, 2021
bhai kay intiqal kay baad uski ki biwi say nikkah karne ka hukum, Ruling / order to marry brother's wife after his death

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.