عنوان: میت کو غسل دینے سے پہلے اس کے پاس بیٹھ کر قرآن کریم کی تلاوت کرنا(107721-No)

سوال: میرے چچا کا جب انتقال ہوا، تو میں نے ان کے ایک بیٹے کو دیکھا کہ وہ غسل سے پہلے ان کی میت کے پاس بیٹھ کر تلاوتِ قرآن کریم کررہا ہے، مجھے یہ بتادیں کہ کیا میت کو غسل دینے سے پہلے اس کے پاس بیٹھ کر قرآن کریم کی تلاوت کرسکتے ہیں؟

جواب: واضح رہے کہ میت کو غسل دینے سے پہلے اس کے پاس بیٹھ کر قرآن کریم کی تلاوت کرنا مکروہ ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی مراقی الفلاح:

وتکرہ قراءۃ القرآن عندہ حتی یغسل تنزیھا للقرآن عن نجاسۃ الحدث بالموت والخبث فانہ یزول عن المسلم بالغسل تکریماً لہ بخلاف الکافر

(عن نجاسۃ الحدث) … والحاصل انھم اختلفوا فی نجاسۃ المیت فقیل نجاسۃ خبث وقیل حدث ویشھد للثانی مارویناہ من تقبیلہ ﷺ عثمان بن مظعون وھو میت قبل الغسل اذلو کان نجسا وضع فاہ الشریف علی جسدہ ولا ینافی ذلک ما ذکروہ من انہ لو حملہ انسان قبل الغسل فصلی بہ لا تصح صلاتہ وکذا کراھۃ القراءۃ عندہ قبل الغسل لجواز ان یکون ذلک لعدم خلوہ عن نجاسۃ غالبا والغالب کالمحقق۔

(ص: 564)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 145

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Funeral & Jinaza

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com