عنوان: تعزیت کے لئے تین دن تک جمع ہونے کا حکم(107753-No)

سوال: آج کل جب کسی شخص کا انتقال ہوتا ہے، تو اس کے رشتہ دار، پڑوسی اور دوست و احباب تین دن تک تعزیت کے لئے جمع ہوتے ہیں، یہ بتادیں کہ لوگوں کے اس عمل سے متعلق کیا حکم ہے؟

جواب: تعزیت کرنے کی غرض سے لوگوں کا تین دن تک جمع ہونے اور بیٹھنے کی گنجائش ہے، البتہ تین دن تک اس جمع ہونے اور بیٹھنے کو لازم سمجھنا درست نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الدرالمختار مع ردالمحتار:

وبتعزیۃ اھلہ وترغیبہم فی الصبر ……وبالجلوس لھا فی غیر مسجد ثلاثۃ ایام واولھا افضل وتکرہ بعدھا ……ویقول اعظم ﷲ اجرک واحسن عزاء ک وغفر لمیتک۔

(وبالجلوس لھا )ای للتعزیۃ واستعمال لابأس ھنا علی حقیقتہ لانہ خلاف الاولی …وفی الاحکام عن خزانۃ الفتاوی الجلوس فی المصیبۃ ثلاثۃ ایام جاءت الرخصۃ فیہ۔

(ج: 2، ص: 239، ط: دار الفکر)

وفی الھندیۃ:

التعزیۃ لصاحب المصیبۃ حسن ……ووقتھا من حین یموت الی ثلاثۃ ایام ویکرہ بعدھا ……ویستحب ان یقال لصاحب التعزیۃ غفر ﷲ تعالی لمیتک وتجاوز عنہ وتغمدہ برحمتہ ورزقک الصبر علی مصیبتہ واجرک علی موتہ ……ولابأس لاھل المصیبۃ ان یجلسوا فی البیت اوفی المسجد ثلا ثۃ ایام والناس یأتونھم ویعزونھم۔

(ج: 1، ص: 167، ط: دار الفکر)

کذا فی نجم الفتاوی:

(ج: 1، ص: 266)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 103

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Funeral & Jinaza

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com