عنوان: قبر کے اندر سے صحیح سلامت نعش نکالی جائے، تو کیا اس پر دوبارہ نماز جنازہ پڑھی جائے گی؟(107755-No)

سوال: اگر کسی کی قبر کھودی جائے اور اس قبر میں سے صحیح سلامت نعش نکلے، تو کیا اسے دوبارہ غسل دیا جائے گا اور کیا اس پر دوبارہ نماز جنازہ پڑھی جائے گی؟

جواب: کسی میت کو دفن کردینے کے بعد اسے قبر سے نکالنا جائز نہیں ہے، البتہ اگر کسی عذر کی وجہ سے قبر کھود کر میت کو نکالا جائے اور میت کا بدن صحیح سالم ہو، تو اسے دوبارہ غسل نہیں دیا جائے گا اور نہ ہی اس پر دوبارہ نمازِ جنازہ پڑھی جائے گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الدر المختار مع رد المحتار:

(ولایخرج منہ) بعد إھالۃ التراب (إلا) لحق آدمی۔۔الخ

(ج: 2، ص: 237، ط: دار الفکر)

وفیہ ایضا:

(و) آدمی (منبوش طری) لم یتفسخ (یکفن کالذی لم یدفن) مرۃ بعد اخری (وان تفسخ کفن فی ثوب واحد)

(قولہ کالذی لم یدفن) ان یکفن فی ثلاثۃ اثواب… ای لو نبش ثانیا وثالثا واکثر کفن کذلک مادام طریا من اصل مالہ عندنا۔

(ج: 2، ص: 205، ط: دار الفکر)

وفی کتاب التجنیس والمزید:

المیت بعد ما دفن مدۃ طویلۃ أو قلیلۃ لایسع إخراجہ من غیر عذر، ویجوز إخراجہ بالعذر، والعذر أن یظھر أن الأرض مغصوبۃ أو أخذھا الشفیع بالشفعۃ۔

(ج: 2، ص: 279)

وفی الفتاویٰ الولوالجیۃ:

واذا دفن المیت لغیر القبلۃ ورأسہ فی أسفلہ ونصب اللبن ولم یھل التراب علیہ نزع اللبن وسوی، وإن ھالوا علیہ التراب لم ینبش لان النبش حرام لمکان ھذہ الأفعال۔ والنبش إنما یکون بعد تمام الدفن وتمام الدفن إنما یکون بعد إھالۃ التراب علیہ۔

(ج: 1، ص: 168)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 101

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Funeral & Jinaza

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com