عنوان: خلافِ ترتیب وضو کے اعضاء کو دھونے کی صورت میں وضو کا حکم(107772-No)

سوال: مفتی صاحب ! کیا وضو کے اعضاء کو دھوتے وقت ترتیب کا خیال رکھنا ضروری ہے، اور کیا اس کے بغیر وضو نہیں ہوگا؟

جواب: وضو کے اعضاء کو دھونے اور مسح کرنے میں ترتیب کا خیال رکھنا سنت ہے، فرض نہیں ہے، لہذا اگر کوئی شخص خلافِ ترتیب وضو کرے، تو اس کا وضو ہوجائے گا، البتہ ایسا کرنا سنت کے خلاف ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الھندیۃ:

(ومنها الترتيب) وهو أن يبدأ بما بدأ الله تعالى بذكره. كذا في التبيين عد القدوري النية والترتيب والاستيعاب من المستحبات وعدها صاحب الهداية والمحيط والتحفة والإيضاح والوافي من السنن وهو الأصح. كذا في معراج الدراية.

(الفصل الثاني في سنن الوضوء، ج: 1، ص: 8، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 31

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com