عنوان: کیا ضرورت کی وجہ سے میت کو تابوت میں بند کرکے دفنا سکتے ہیں؟(7777-No)

سوال: اگر بم دھماکہ کی وجہ سے کسی کے اعضاء بکھر گئے ہوں، تو کیا اس کے اعضاء کسی تابوت میں بند کرکے دفناسکتے ہیں؟

جواب: اگر کسی میت کو تابوت میں بند کرنے کی ضرورت ہو، تو اسے تابوت میں بند کرکے دفنانا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (234/2، ط: دار الفکر)
(ولا بأس باتخاذ التابوت) ولو من حجر او حدید (لہ عند الحاجۃ کرخاوۃ الارض۔

الفتاوی الھندیۃ: (166/1، ط: دار الفکر)
وحکی عن الشیخ الامام ابی بکر محمد بن الفضل رحمہ اﷲ انہ جوز اتخاذ التابوت فی بلادنا لرخاوۃ الارض قال ولو اتخذ تابوت من حدید لا بأس بہ لکن ینبغی ان یفرش فیہ التراب ویطین الطبقۃ العلیاء الخ۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 385
kia zaroorat ki waja say mayyat ko taboot mai band kar kay dafna saktay hain?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Funeral & Jinaza

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.