عنوان: کاغذ پر لکھی ہوئی قرآنی آیات کو میت کے ساتھ قبر میں رکھنے کا حکم(7827-No)

سوال: اگر کوئی شخص کاغذ پر لکھی ہوئی قرآنی آیات کو اپنے رشتہ دار کی میت کے ساتھ قبر میں رکھ دے، تو اس کا یہ عمل کیسا ہے؟



جواب: کسی میت کے ساتھ اس کی قبر میں کاغذ پر لکھی ہوئی قرآنی آیات کو رکھنا درست نہیں ہے، کیونکہ اس میں قرآن کریم کی بے ادبی اور بے حرمتی لازم آئے گی۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

رد المحتار: (246/2، ط: دار الفکر)
تکرہ کتابۃ القرآن وأسماء اﷲ تعالیٰ علی الدراھم والمحاریب والجدوان وما یفرش، وما ذاک الا لاحترامہ وخشیۃ وطئہ ونحوہ مما فیہ اھانۃ فالمنع ھنا بالاولیٰ مالم یثبت عن المجتھد أو ینقل فیہ حدیث ثابت۔۔الخ

الفتاوی الھندیة: (کتاب الکراہیۃ، 316/5)
أن تعظیم القرآن والفقہ واجب، کذا في فتاویٰ قاضي خان۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 381
kaa ghaz mai likhi hoi qurani aayat ko mayyat kay sath qabar mai rakhne ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Funeral & Jinaza

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.