عنوان: اگر وضو کے دوران پہلا عضو خشک ہوجائے، تو کیا دوبارہ شروع سے وضو کرنا ضروری ہوگا؟(107834-No)

سوال: مفتی صاحب ! مجھے یہ بتادیں کہ اگر کوئی شخص وضو کررہا ہو اور وہ مثلاً دایاں ہاتھ دھولے اور بایاں دھونے لگے اور اس دوران پہلا دھویا ہوا دایاں ہاتھ خشک ہوجائے، تو کیا اسے دوبارہ شروع سے وضو کرنا ضروری ہوگا؟

جواب: وضو کے اعضاء کو پے در پے دھونا (یعنی پہلا عضو خشک نہ ہونے پائے کہ دوسرا عضو دھولیا جائے) سنت ہے، فرض نہیں ہے، لہذا اگر کوئی شخص پہلا عضو خشک ہونے کے بعد دوسرا عضو دھوئے، اگرچہ ایسا کرنا خلافِ سنت ہے، بہر حال اس کا وضو ہو جائے گا۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کما فی الھندیۃ:

(ومنها الموالاة) وهي التتابع وحده أن لا يخف الماء على العضو قبل أن يغسل ما بعده في زمان معتدل ولا اعتبار بشدة الحر والرياح ولا شدة البرد ويعتبر أيضا استواء حالة المتوضئ كذا في الجوهرة النيرة.

(الفصل الثاني في سنن الوضوء، ج: 1، ص: 8، ط: دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 215
agar wozu kay doran pehla uz khushk hojaye to kia dobara shuru say wozu karna zaoori hoga?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.