عنوان: سوتیلی ماں کی بیٹی سے نکاح کا حکم(7885-No)

سوال: مفتی صاحب ! ایک آدمی نے کسی ایک مطلقہ عورت سے دوسری شادی کی، اس آدمی کی پہلی بیوی سے ایک بیٹا ہے، اور اس دوسری بیوی کی پہلے شوہر سے ایک بیٹی ہے، کیا اس آدمی کے پہلی بیوی سے پیدا ہوئے لڑکے کا، اس دوسری بیوی کی پہلے شوہر سے جو لڑکی ہے، اس کے ساتھ نکاح کرنا جائز ہے؟

جواب: صورت مسئولہ میں چونکہ لڑکا اور لڑکی کا آپس میں محرمیت کا کوئی رشتہ نہیں ہے، لہذا ان دونوں کا آپس میں نکاح کرنا جائز ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (النساء، الآیۃ: 23)
حُرِّمَتْ عَلَيْكُمْ اُمَّهَاتُكُمْ وَبَنَاتُكُمْ وَاَخَوَاتُكُمْ وَعَمَّاتُكُمْ۔۔۔۔الخ

رد المحتار: (13/3)
قوله ( وأما بنت زوجة أبيه أو ابنه فحلال ) وكذا بنت ابنها،بحر، قال الخير الرملي ولا تحرم بنت زوج الأم ولا أمه ولا أم زوجة الأب ولا بنتها ولا أم زوجة ابن ولا بنتها ولا زوجة الربيب ولا زوجة الاب۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 757 Jun 27, 2021
sooteeli maa ki beti say nikkah ka hukum, Order / ruling of marriage with step mother's daughter

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.