عنوان: کھانے سے پہلے مکمل "بسم اللہ الرحمٰن الرحیم" پڑھنا چاہیے یا صرف "بسم اللہ" پڑھنا چاہیے؟(107925-No)

سوال: مفتی صاحب ! کیا کھانا شروع کرنے کے وقت مکمل بسم اللہ الرحمن الرحیم پڑھنا سنت ہے یا صرف بسم اللہ پڑھنا سنت ہے؟

جواب: کھانا شروع کرنے سے پہلے تسمیہ پڑھنا سنت ہے، جو صرف "بسم اللہ" پڑھنے سے بھی ادا ہو جائے گی، جبکہ امام نووی رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ پوری " بسم اللہ الرحمٰن الرحیم" پڑھنا زیادہ بہتر ہے، کیونکہ اس میں کمال توصیف پائی جاتی ہے، اور بعض روایات میں " بسم اللہ وبرکۃ اللہ" کے الفاظ بھی آئے ہیں، لہذا کھانا شروع کرنے سے پہلے "بسم اللہ وبرکۃ اللہ" بھی پڑھ سکتے ہیں۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل

کذا فی الحدیث النبوی:

عن أبي سلمۃ رضي اللّٰہ عنہ یقول: کنت غلامًا في حجر رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم، وکانت یدي تطیشُ في الصحفۃ، فقال لي رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: یا غلامُ! سم اللّٰہ، وکل بیمینک، وکل مما یلیک، فما زالت تلک طعمتي بعدُ۔

(صحیح البخاري، کتاب الأطعمۃ / باب التسمیۃ علی الطعام والأکل بالیمین 809/2 رقم: 5376 دار الفکر بیروت)


وفی الحدیث النبوی

قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم: سم اللّٰہ وکل بیمینک وکل مما یلیک۔

(ریاض الصالحین: 215)

وفی الحدیث النبوی:

عن ابن عباس رضي اللّٰہ عنہما أن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم وأبا بکر وعمر رضي اللّٰہ عنہما أتوا بیت أبي أیوب، فلما أکلوا وشبعوا، قال النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم: خبز ولحم وتمر وبسر ورطب، إذا أصبتم مثل ہٰذا فضربتم بأیدیکم، فکلوا بسم اللّٰہ وبرکۃ اللّٰہ۔ ہٰذا حدیث صحیح الإسناد ولم یخرجاہ۔

(المستدرک علی الصحیحین للحاکم، کتاب الأطعمۃ / باب إذا أکل أحدکم طعامًا فلیقل: بسم اللّٰہ 120/4 دار الکتب العلمیۃ بیروت)

کذا فی شرح مسلم للنووی

يستحب أن يسمي ويقول بسم الله أوله وآخره لقوله صل أحدكم فليذكر اسم الله فإن نسي أن يذكر الله في أوله فليقل بسم الله أوله وآخره رواه أبوداود والترمذي وغيرهما قال الترمذي حديث حسن صحيح والتسمية في شرب الماء واللبن والعسل والمرق والدواء وسائر المشروبات كالتسمية على الطعام في كل ما ذكرناه وتحصل التسمية بقوله بسم الله فإن قال بسم الله الرحمن الرحيم كان حسنا۔

(ج13، ص189، دار احياء التراث العربي)

کذا فی الحاشیہ الطحطاوی:

وقیل: عن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم في لفظہا: ’’بسم اللّٰہ العظیم والحمد للّٰہ علی دین الإسلام‘‘۔ وقیل: الأفضل ’’بسم اللّٰہ الرحمٰن الرحیم‘‘۔ في البنایۃ عن المجتبی: لو قال: بسم اللّٰہ الرحمن الرحیم، بسم اللّٰہ العظیم والحمد للّٰہ علی دین الإسلام، فحسن لوُرود الآثار۔

(حاشیۃ الطحطاوي علی مراقي الفلاح، کتاب الطہارۃ / فصل في سنن الوضوء ص: 67 )


کذا فی الفتاویٰ الکبری:

وإذا قال عند الأكل بسم الله الرحمن الرحيم كان حسنا فإنه أكمل۔

(ج5، ص480، دار الكتب العلمية)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 319
khanay say pehle mukammal "بسم اللہ الرحمٰن الرحیم"parhna chahiye ya sirf"بسم اللہ" parhna chahiye?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Azkaar & Supplications

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.