عنوان: کیا عقیقہ میں بھی چھوٹے جانور کے دو دانت ہونا ضروری ہیں؟(107953-No)

سوال: مفتی صاحب ! عقیقے میں چھوٹا جانور کرسکتےہیں یا دو دانت کا ہونا ضروری ہے؟

جواب: واضح رہے کہ جس جانور کی قربانی جائز نہیں ہے، اس جانور کا عقیقہ بھی درست نہیں ہے، لہذا صورتِ مسئولہ میں اگر چھوٹے جانور سے مراد بکرا یا بکری ہے، تو قربانی کی طرح عقیقہ کے بکرے یا بکری کا پورے ایک سال کا ہونا ضروری ہے، اگر ایک دن بھی کم ہوگا، تو عقیقہ نہیں ہوگا۔

اور اگر دنبہ اور بھیڑ وغیرہ مراد ہے، تو وہ کم از کم چھ مہینے کا ہو، لیکن صحت اور فربہ ہونے میں سال بھر کا معلوم ہوتا ہو، تو اس کا بھی عقیقہ درست ہوگا۔

تاہم دو دانت ہونا عمر پوری ہونے کی علامت ہے، شرط نہیں ہے، لہذا عمر پوری ہونے کی صورت میں اگر دو دانت مکمل نہ نکلیں ہوں، تب بھی عقیقہ صحیح ہو جائے گا۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کما فی الشامیۃ:

يستحب لمن ولد له ولد أن يسميه يوم أسبوعه ويحلق رأسه ويتصدق۔۔۔۔۔وهي شاة تصلح للأضحية تذبح للذكر والأنثى۔

(ج:6،ص:336،ط:دار الفکر)

وفی الھندیۃ:

فلا یجوز شيء مما ذکرنا من الإبل والبقر والغنم عن الأضحیۃ إلا الثني من کل جنس، وإلا الجذع من الضأن خاصۃً إذا کان عظیمًا ۔۔۔۔ وأما معاني هذه الأسماء فقد ذكر القدوري أن الفقهاء قالوا: الجذع من الغنم ابن ستة أشهر۔۔۔۔۔۔ حتی لو ضحیٰ بأقل من ذلک شیئًا لا یجوز۔۔۔۔۔۔الخ

(ج:5،ص:297،ط:دار الفکر)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 269
kia aqiqay mai bhi chootay janwar kay do daant hona zaroori hai?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.