عنوان: بیوی سے متعدد بار ہمبستری کرنے کی صورت میں غسل کرنے کا شرعی حکم(107966-No)

سوال: مفتی صاحب! اگر شادی شدہ شخص ایک رات میں کئی بار اپنی بیوی سے جماع کرے تو کیا ہر مرتبہ غسل کرنا ضروری ہے؟ رہنمائی فرمائیں۔

جواب: بیوی سے متعدد بار جماع ( ہمبستری) کرنے کی صورت میں آخر میں صرف ایک مرتبہ غسل کرلینا کافی ہے، ہر بار غسل کرنے کی ضرورت نہیں، البتہ درمیان میں وضو کرلینا بہتر ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کذا فی سنن الترمذی :

ﺣﺪﺛﻨﺎ ﺑﻨﺪاﺭ، ﻗﺎﻝ: ﺣﺪﺛﻨﺎ ﺃﺑﻮ ﺃﺣﻤﺪ، ﻗﺎﻝ: ﺣﺪﺛﻨﺎ ﺳﻔﻴﺎﻥ، ﻋﻦ ﻣﻌﻤﺮ، ﻋﻦ ﻗﺘﺎﺩﺓ، ﻋﻦ ﺃﻧﺲ، ﺃﻥ اﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻛﺎﻥ ﻳﻄﻮﻑ ﻋﻠﻰ ﻧﺴﺎﺋﻪ ﻓﻲ ﻏﺴﻞ ﻭاﺣﺪ۔

(رقم الحدیث : 140، ط : دار الغرب الاسلامی)

کذا فی سنن الترمذی :

ﺣﺪﺛﻨﺎ ﻫﻨﺎﺩ، ﻗﺎﻝ: ﺣﺪﺛﻨﺎ ﺣﻔﺺ ﺑﻦ ﻏﻴﺎﺙ، ﻋﻦ ﻋﺎﺻﻢ اﻷﺣﻮﻝ، ﻋﻦ ﺃﺑﻲ اﻟﻤﺘﻮﻛﻞ، ﻋﻦ ﺃﺑﻲ ﺳﻌﻴﺪ اﻟﺨﺪﺭﻱ، ﻋﻦ اﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻗﺎﻝ: ﺇﺫا ﺃﺗﻰ ﺃﺣﺪﻛﻢ ﺃﻫﻠﻪ، ﺛﻢ ﺃﺭاﺩ ﺃﻥ ﻳﻌﻮﺩ، ﻓﻠﻴﺘﻮﺿﺄ ﺑﻴﻨﻬﻤﺎ ﻭﺿﻮءا.
ﻭﻓﻲ اﻟﺒﺎﺏ ﻋﻦ ﻋﻤﺮ. حدﻳﺚ ﺃﺑﻲ ﺳﻌﻴﺪ، ﺣﺪﻳﺚ ﺣﺴﻦ ﺻﺤﻴﺢ. وﻫﻮ ﻗﻮﻝ ﻋﻤﺮ ﺑﻦ اﻟﺨﻄﺎﺏ.
ﻭﻗﺎﻝ ﺑﻪ ﻏﻴﺮ ﻭاﺣﺪ ﻣﻦ ﺃﻫﻞ اﻟﻌﻠﻢ ﻗﺎﻟﻮا: ﺇﺫا ﺟﺎﻣﻊ اﻟﺮﺟﻞ اﻣﺮﺃﺗﻪ، ﺛﻢ ﺃﺭاﺩ ﺃﻥ ﻳﻌﻮﺩ، ﻓﻠﻴﺘﻮﺿﺄ ﻗﺒﻞ ﺃﻥ ﻳﻌﻮﺩ.

(رقم الحدیث :141، ط : دار الغرب الاسلامی)

کذا فی فتاوی عثمانی، ج : 1، ص : 332

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 177
biwi say mutaddid bar hambistari karne ki soorat mai ghusal karne ka shar'ee hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.