عنوان: مختلف علاقوں کے اعتبار سے قربانی کے حصوں کی قیمتوں میں فرق ہونا(7969-No)

سوال: مفتی صاحب ! مختلف جگہوں پر قربانی کے حصوں کے مختلف قیمتوں کے ساتھ بورڈ لگے ہوئے ہیں، قربانی کا حصہ 13000، اندرون سندھ 7000 اور گلگت 4500۔ پوچھنا یہ تھا کہ یہ تین قسم کی قربانی کس کے لیے کون سی ہے؟
براہ کرم رہنمائی فرمادیں۔

جواب: واضح رہے کہ مختلف شہروں کے اعتبار سے جانوروں کی قیمتوں میں فرق ہونے کی وجہ سے قربانی کے حصوں کی قیمت میں بھی فرق ہوجاتا ہے، جس علاقے میں جانور کی مالیت جیسی ہوگی، قربانی میں حصہ بھی اسی حساب سے ہوگا، جن علاقوں میں جانور سستے ملتے ہیں تو وہاں قربانی کا حصہ بھی کم قیمت میں ہوتا ہے، چنانچہ اسی وجہ سے مختلف شہروں کے اعتبار سے مختلف قیمتوں کے اشہتار دیکھنے کو ملتے ہیں، جیسا کہ سوال میں بھی اس کا ذکر گیا ہے۔
چونکہ صاحب نصاب پر ایک قربانی کرنا واجب ہے، یعنی ایک چھوٹا جانور یا بڑے جانور میں ایک ساتواں حصہ، پھر چاہے وہ کہیں بھی کی جائے، قربانی ادا ہوجائے گی، اس لیے کسی اور شہر کا رہنے والا بھی، اگر ان دور دراز علاقوں میں قربانی کرنا چاہے، تو کرسکتا ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (الحج، الآیۃ: 37)
لَنْ يَنَالَ اللَّهَ لُحُومُهَا وَلَا دِمَاؤُهَا وَلَكِنْ يَنَالُهُ التَّقْوَى مِنْكُمْ۔۔۔۔الخ

رد المحتار: (318/6، ط: سعید)
فلو كانت في السواد والمضحي في المصر جازت قبل الصلاة، وفي العكس لم تجز قهستاني.

البحر الرائق: (200/8، ط: دار الكتاب الإسلامي)
لو كانت في السواد، والمضحي في المصر يجوز كما انشق الفجر، وفي العكس لا يجوز إلا بعد الصلاة وحيلة المصري إذا أراد التعجيل أن يبعث بها إلى خارج المصر في موضع للمسافر أن يقصر فيضحي فيه كما طلع الفجر لأن وقتها من طلوع الفجر، وإنما أخرت في حق المصر لما ذكرنا

الجوهرة النيرة: (کتاب الأضحية، ص: 218، ط: مکتبہ امدادیہ ملتان)
الأضحية إراقة الدم من النعم دون سائر الحيوان، والدليل على أنها الإراقة أنه لو تصدق بعين الحيوان لم يجز، والصدقة بلحمها بعد الذبح مستحب وليس بواجب حتى لو لم يتصدق به جاز....قال - رحمه الله - (الأضحية واجبة)........ (يذبح عن كل واحد منهم شاة) شرط الذبح حتى لو تصدق بها حية في أيام النحر لا يجوز لأن الأضحية الإراقة.قوله: (أو يذبح بدنة أو بقرة عن سبعة) ، والبدنة، والبقرة تجزئ كل واحدة منهما عن سبعة إذا كانوا كلهم يريدون بها وجه الله تعالى.

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاءالاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 673 Jul 11, 2021
mukhtalif elaqon kay aetibaar say qurbani kay hisson ki qeemton mai farq hona

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.