عنوان: کھڑے ہوکر غسل کرنا بہتر ہے یا بیٹھ کر؟(107974-No)

سوال: مفتی صاحب! غسل بیٹھ کر کرنا بہتر ہے یا کھڑے ہوکر؟ رہنمائی فرمائیں۔

جواب: کھڑے ہوکر غسل کرنا جائز ہے، لہذا اگر بے پردگی کا احتمال نہ ہو تو کھڑے ہوکر بھی غسل کرسکتے ہیں، لیکن بیٹھ کر غسل کرنا بہرحال مستحب اور بہتر ہے، کیونکہ بیٹھ کر غسل کرنے میں بدن کا پردہ زیادہ ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


کذا فی حاشیۃ الطحطاوی :

ﻭﻳﺴﺘﺤﺐ ﺃﻥ ﻳﻐﺘﺴﻞ ﺑﻤﻜﺎﻥ ﻻ ﻳﺮاﻩ ﺃﺣﺪ ﻻ ﻳﺤﻞ ﻟﻪ اﻟﻨﻈﺮ ﻟﻌﻮﺭﺗﻪ؛ ﻻﺣﺘﻤﺎﻝ ﻇﻬﻮﺭﻫﺎ ﻓﻲ ﺣﺎﻝ اﻟﻐﺴﻞ، ﺃﻭ ﻟﺒﺲ اﻟﺜﻴﺎﺏ ؛ ﻟﻘﻮﻟﻪ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ: "ﺇﻥ اﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ ﺣﻴﻲ ﺳﺘﻴﺮ ﻳﺤﺐ اﻟﺤﻴﺎء ﻭاﻟﺴﺘﺮ ﻓﺈﺫا اﻏﺘﺴﻞ ﺃﺣﺪﻛﻢ ﻓﻠﻴﺴﺘﺘﺮ" ﺭﻭاﻩ ﺃﺑﻮ ﺩاﻭﺩ۔ ﻭﺇﺫا ﻟﻢ ﻳﺠﺪ ﺳﺘﺮﺓ ﻋﻨﺪ اﻟﺮﺟﺎﻝ ﻳﻐﺘﺴﻞ ﻭﻳﺨﺘﺎﺭ ﻣﺎ ﻫﻮ ﺃﺳﺘﺮ۔

(آداب الاغتسال، ج: 1، ص : 106، ط : دار الفکر)

کذا فی الموسوعۃ الفقہیۃ الکویتیۃ :

ﻭﺻﺮﺣﻮا ﺑﺄﻥ ﻣﻦ ﺁﺩاﺏ اﻟﻐﺴﻞ: ﺃﻥ ﻳﻐﺘﺴﻞ ﺑﻤﻜﺎﻥ ﻻ ﻳﺮاﻩ ﻓﻴﻪ ﺃﺣﺪ ﻻ ﻳﺤﻞ ﻟﻪ اﻟﻨﻈﺮ ﻟﻌﻮﺭﺗﻪ؛ ﻻﺣﺘﻤﺎﻝ ﻇﻬﻮﺭﻫﺎ ﻓﻲ ﺣﺎﻝ اﻟﻐﺴﻞ ﺃﻭ ﻟﺒﺲ اﻟﺜﻴﺎﺏ، ﻟﻘﻮﻝ اﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ: ﺇﻥ اﻟﻠﻪ ﻋﺰ ﻭﺟﻞ ﺣﻴﻲ ﺳﺘﻴﺮ ﻳﺤﺐ اﻟﺤﻴﺎء ﻭاﻟﺴﺘﺮ، ﻓﺈﺫا اﻏﺘﺴﻞ ﺃﺣﺪﻛﻢ ﻓﻠﻴﺴﺘﺘﺮ۔

(ج : 31، ص : 216، ط : دار الصفوۃ)

کذا فی فتاوی حقانیہ، ج : 2، ص : 527

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 198
kharay hokar ghusal karna behtar hai ya beth kar?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.