عنوان: کیا خون دینے سے وضو ٹوٹ جاتا ہے؟(108006-No)

سوال: میرے ایک رشتہ دار کو خون کی ضرورت تھی، تو میں نے اسے اپنا ایک بوتل خون دے دیا، میں اس وقت وضو کی حالت میں تھا، سرنج سے خون نکالا گیا اور خون میرے جسم پر بالکل نہیں بہا، سوال یہ ہے کہ کیا اس صورت میں خون دینے سے میرا وضو ٹوٹ گیا؟

جواب: وضو کی حالت میں خون دینے سے وضو ٹوٹ جاتا ہے، خواہ خون جسم پر بہے یا نہ بہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی الدر المختار مع رد المحتار:

(و ینقضہ خروج ) کل خارج (نجس)۔۔۔۔۔۔(إلی مایطھر۔۔۔۔۔)

والمراد بالتطھیر مایعم الغسل والمسح فی الغسل أو فی الوضوء کما ذکرہ ابن الکمال… زاد فی ’’شرح المنیۃ الکبیر‘‘ بعد قولہ ’’فی الغسل أو فی الوضوء قولہ أو فی إزالۃ النجاسۃ الحقیقیۃ لئلا یرد مالو افتصد وخرج منہ دم کثیر ولم یتلطخ رأس الجرح فانہ ناقض مع أنہ لم یسل إلی ما یلحقہ حکم التطھیر لأنہ سال إلی المکان دون البدن……أقول: یردعلیہ مالو سال إلی نھر ونحوہ ممالا یصلی علیہ وما لومص العلق أو القراد الکبیر وامتلأ دما فانہ ناقض۔۔۔۔۔۔ فالأحسن مافی النھر عن بعض المتأخرین من أن المراد السیلان ولو بالقوۃ، أی فإن دم الفصد ونحوہ سائل إلی ما یلحقہ حکم التطھیر حکما تأمل۔

(ج: 1، ص: 134، ط: دارا لفکر)

وفی الھندیۃ:

القراد إذا مص عضو إنسان فامتلأ دما إن کان صغیرا لا ینقض وضوء ہ کما لو مصت الذباب أو البعوض، وإن کان کبیرا ینقض وکذا العلقۃ إذا مصت عضو إنسان حتی امتلأت من دمہ انتقض وضوءہ۔

(ج: 1، ص: 11، ط: دار الفکر)


واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Views: 56

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com