عنوان: سوتیلی ماں کی بہن سے نکاح(8147-No)

سوال: ايک آدمی نے 2 شادياں کی ہيں، ايک بيوی سے بيٹا ہے، وہ آدمی اپنی دوسری بيوی کی بہن سے اپنے بيٹے کا نکاح کراسکتا ہے يا نہیں؟

جواب: سوتیلی والدہ کی بہن محرمات میں سے نہیں ہے، لہذا سوتیلی والدہ کی بہن سے نکاح کرنا درست ہے، بشرطیکہ حرمت کی کوئی اور وجہ، مثلاً: رضاعت وغیرہ موجود نہ ہو۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (الانعام، الایة: 24)
و احل لکم ما وراء ذلکم....الخ

الدر المختار مع رد المحتار: (31/3، ط: دار الفکر)
وأما بنت زوجة أبيه أو ابنه فحلال.
(قوله: وأما بنت زوجة أبيه أو ابنه فحلال) وكذا بنت ابنها بحر.
قال الخير الرملي: ولا تحرم بنت زوج الأم ولا أمه ولا أم زوجة الأب ولا بنتها ولا أم زوجة الابن ولا بنتها ولا زوجة الربيب ولا زوجة الراب. اه.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 939 Aug 09, 2021
sooteeli maa ki behen say nikkah

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.