عنوان: احتلام ہوجانے کے بعد غسل کرنا ضروری ہے، صرف وضو کافی نہیں(108159-No)

سوال: مفتی صاحب ! اگر احتلام ہوجائے تو کیا صرف وضو کر کے نہائے بغیر نماز پڑھ سکتے ہیں؟

جواب: احتلام ہو جانے کی صورت میں صرف وضو سے پاکی حاصل نہیں ہوگی، بلکہ غسل کرنا لازم ہے، بغیر غسل کیے صرف وضو کرکے نماز پڑھنا جائز نہیں ہے۔

دلائل:

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔


الھدایہ:(19/1،فصل فی الغسل،ط:داراحیاءالتراث العربی)
والمعانی الموجبۃ للغسل انزال المنی علی وجہ الدفق والشہوۃ من الرجل والمرأۃ حالۃ النوم والیقظۃ۔

الھندیۃ:(14/1،ط:دارالفکر)
وان استیقظ الرجل ووجد علی فراشہ او فخذہ بللا وھو یتذکر احتلاما ان تیقن انہ منی أو تیقن أنہ مذی أو شک انہ منی أو مذی فعلیہ الغسل وان تیقن انہ ودی لاغسل علیہ وان رأی بللا الا انہ لم یتذکر الاحتلام فان تیقن انہ ودی لا یجب الغسل وان تیقن أنہ منی یجب الغسل۔

الدر المختارمع ردالمحتار:(163/1،ط:دارالفکر)
(و)عند (رؤیۃ مستیقظ) … وإن لم یتذکر الاحتلام وفی الشامیۃ فیجب الغسل اتفاقا فی سبع صور منھا…(إلی قولہ) او علم انہ منی مطلقا۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 285
ihtilam hojanay kay baad ghusal karna zaroori hai sirf wozu kafi nahi

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.