عنوان: ایصال ثواب کے لئے دن متعین کرنا(108197-No)

سوال: جو اولاد اپنے والدین سے محبت کرتے ہیں ان کے انتقال کے بعد ان کے لئے دعا مغفرت اور قرآن وغیرہ پڑھتے ہیں اپنے طور پر لیکن وہ یہ چاہتے ہیں کہ سال میں ایک دفعہ سب بہن بھائی جمع ہوکر ان کے لئے کچھ پڑھیں ،اس سلسلہ مین پوچھنا ہے کہ جس مہینہ میں انتقال ہو یس مہینہ میں کسی دن جمع ہوسکتے ہیں ؟

جواب: واضح رہے کہ والدین سے عقیدت اور محبت کا اظہار کرتے ہوئے، ان کے لئے قرآن پڑھ کر اور دعائیں مانگ کر ایصال ثواب کرنا نہ صرف جائز، بلکہ مستحسن ہے، اس سے میت کو اور پڑھنے والے دونوں کو فائدہ ہوتا ہے، البتہ شریعت میں اس کا کوئی خاص طریقہ مقرر نہیں، جو شخص جس وقت اور جس دن چاہے، کوئی بھی عمل کرکے ایصال ثواب کرسکتا ہے، اس کے لئے ہر سال کوئی دن یا مہینہ خاص کر کے جمع ہونا قرآن و حدیث سے ثابت نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی صحیح البخاری:

عن عائشة رضي الله عنها، قالت: قال رسول الله صلى الله عليه وسلم: «من أحدث في أمرنا هذا ما ليس فيه، فهو رد» رواه عبد الله بن جعفر المخرمي، وعبد الواحد بن أبي عون، عن سعد بن إبراهيم

(ج3، ص184، ط: دار طوق النجاۃ)


کذا فی مرقاة المفاتیح:

قال الطيبي: وفيه أن من أصر على أمر مندوب، وجعله عزما، ولم يعمل بالرخصة فقد أصاب منه الشيطان من الإضلال ، فكيف من أصر على بدعة أو منكر ۔

(ج3، ص31)


کذا فی شرح العقائد:

وفی دعاء الاحیاء للاموات وصدقتھم ای صدقۃ الاحیاء عنھم ای عن الاموات نفع لھم ای للاموات …ولنا ما ورد فی الاحادیث الصحاح من الدعا للاموات خصوصا فی صلاۃ الجنازۃ وقد توارثہ السلف فلو لم یکن للاموات نفع فیہ لما کان لہ معنی وقال علیہ السلام مامن میت تصلی علیہ امۃ من المسلمین یبلغون مائۃ کلھم یشفعون الا شفعوا فیہ وعن سعد بن عبادۃ انہ قال یا رسول اﷲ ان ام سعد ماتت فای الصدقۃ افضل قال الماء فحفر بیرا وقال ھذا لام سعد۔
(شرح العقائد، ص:172)

وفی الشامیۃ:

(تنبیہ) صرح علماءنا فی باب الحج عن الغیر بان للانسان ان یجعل ثواب عملہ لغیرہ صلاۃ او صوما او صدقۃ او غیرھا کذا فی الھدایۃ، بل فی زکاۃ التتارخانیۃ عن المحیط: الافضل لمن یتصدق نفلا ان ینوی لجمیع المؤمنین والمؤمنات لانھا تصل الیھم ولا ینقص من اجرہ شیٔ اھـ ھو مذھب اھل السنۃ والجماعۃ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ ولھذا اختاروا فی الدعاء: اللھم اوصل مثل ثواب ما قرأتہ الی فلان، واما عندنا فالواصل الیہ نفس الثواب وفی البحر: من صام اوصلی او تصدق وجعل ثوابہ لغیرہ من الاموات والاحیاء جاز، ویصل ثوابھا الیھم عند اھل السنۃ والجماعۃ کذا فی البدائع۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔أن الظاہر أنہ لا فرق بین أن ینوي بہ عند الفعل للغیر أو یفعلہ لنفسہ ثم یجعل ثوابہ لغیرہ لإطلاق کلامہم․ قال: قولہ: ” لغیرہ“ أي من الأحیاء والأموات۔

(ج2، ص180، مطلب فی القراءۃ للمیت واھداء ثوابھا لہ، ط: دارالفکر)


واللہ تعالی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کرقچی
Print Full Screen Views: 221

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Funeral & Jinaza

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com