عنوان: جس شہر میں عید الاضحٰی کی نماز عذر کی وجہ سے ادا نہ کی جا سکے، تو وہاں قربانی کس وقت کریں؟(8215-No)

سوال: مفتی صاحب ! شہر میں لوگ عذر کیوجہ سے عید الضحی کی نماز ادا نہ کرسکیں تو قربانی کب کریں گے؟

جواب: واضح رہے کہ جس شہر میں عذر (مثلاََ: سخت بارش، سیلاب یا کرفیو وغیرہ) کی وجہ سے عیدالاضحی کی نماز نہ کی جاسکے، تو وہاں زوال کے بعد قربانی کرنا درست ہے، البتہ زوال سے پہلے قربانی کرنا جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار: (318/6، ط: دار الفکر)
وَبَعْدَ مُضِيِّ وَقْتِهَا لَوْ لَمْ يُصَلُّوا لِعُذْرٍ، وَيَجُوزُ فِي الْغَدِ وَبَعْدَهُ قَبْلَ الصَّلَاةِ لِأَنَّ الصَّلَاةَ فِي الْغَدِ تَقَعُ قَضَاءً لَا أَدَاءً زَيْلَعِيٌّ وَغَيْرُهُ.

رد المحتار: (318/6، ط: دار الفکر)
(قَوْلُهُ وَبَعْدَ مُضِيِّ وَقْتِهَا) أَيْ وَقْتِ الصَّلَاةِ، وَهُوَ مَعْطُوفٌ عَلَى قَوْلِهِ بَعْدَ الصَّلَاةِ، وَوَقْتُ الصَّلَاةِ مِنْ الِارْتِفَاعِ إلَى الزَّوَالِ
(قَوْلُهُ لِعُذْرٍ)۔۔۔ فَإِنْ اشْتَغَلَ الْإِمَامُ فَلَمْ يُصَلِّ أَوْ تَرَكَ عَمْدًا حَتَّى زَالَتْ فَقَدْ حَلَّ الذَّبْحُ بِغَيْرِ صَلَاةٍ فِي الْأَيَّامِ كُلِّهَا لِأَنَّهُ بِالزَّوَالِ فَاتَ وَقْتُ الصَّلَاةِ.

احسن الفتاوی: (485/7، ط: سعید)

واللہ تعالی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 871 Aug 21, 2021
jis sheher mai eid ul azha ki namaz uzar ki waja say ada na ki ja sakay to waha qurbani kis waqt karain?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Qurbani & Aqeeqa

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.