عنوان: حضور اکرم ﷺ کا نام سن کر انگوٹھے چومنا(8278-No)

سوال: نبی پاک ﷺ کا نام مبارک سن کر انگوٹھے چومنے کا عمل کیسا ہے؟

جواب: آپ ﷺ کا نامِ مبارک سن کر آپ پر درود اور سلام بھیجنا انتہائی سعادت، برکت اور ثواب کا باعث ہے، لیکن اس موقع پر انگوٹھے چومنا اور انہیں آنکھوں سے لگانا کسی صحیح روایت سے ثابت نہیں ہے اور نہ ہی صحابہ کرامؓ سے اس کا ثبوت ملتا ہے، اسی وجہ سے علماء کرام نے اس عمل کو ثواب سمجھ کر کرنے کو بدعت قرار دیا ہے، لہذا اس سے اجتناب کرنا ضروری ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

فیض الباری: (212/2، ط: دار الکتب العلمیۃ)
وکذالک لا اصل لتقبیل الابھامین عند الشھادتین کما شرع فی بلادنا الا اثر اخرجہ القاری عن ابی بکر رضی اللہ عنہ فی الموضوعات لکنہ ضعیف یقرب المنکر۔

المقاصد الحسنۃ للسخاوی: (ص: 605، ط: دار الکتاب العربی)
وکذا ما اوردہ ابو العباس احمد بن ابی بکر الرداد الیمانی المتصوف فی کتابہ ’’موجبات الرحمۃ وعزا ئم المغفرۃ ‘‘ بسند فیہ مجاھیل مع انقطاعہ عن الخضر علیہ السلام انہ ممن قال حین سمع المؤذن یقول اشہد ان محمدا رسول اﷲ، مرحبا بحبیبی وقرۃ عینی محمد بن عبداللہ ﷺ ثم یقبل ابھامیہ ویجعلھما علی عینیہ لم یرمد أبدً۔

رد المحتار: (398/1، ط: دار الفکر)
یستحب ان یقال عند سماع الأولی من الشھادۃ:صلی اﷲ علیک یا رسول اﷲ وعند الثانیۃ منھا قرت عینی بل یارسول اﷲ اللھم متضی بالسمع والبصر بعد وضع ظفری الابھامین علی العینین فانہ علیہ السلام یکون قائدا لہ الی الجنۃ … کذا فی کنز العباد اھ قسھتانی ونحوہ فی الفتاویٰ الصوفیۃ وفی کتاب الفردوس ’’من قبل ظفری إبھامہ عند سماع أشھد أن محمدا رسول اﷲ فی الاذن أنا قائدہ ومدخلہ فی صفوف الجنۃ وتمامہ فی حواشی البحر للرملی عن المقاصد الحسنۃ للسخاوی وذکر ذلک الجراحی وأطال ثم قال: ولم یصح فی المرفوع من کل ھذا شیٔ۔

بوادر النوادر: (چونتیسواں نادرہ در مسح عینین بالانامل عند الاذان، ص: 408,409، ط: ادارۃ اسلامیات)
قال الشیخ اشرف علی التھانوی : قلت اورد صاحب المقاصد فی الباب عدۃ اقسام من الروایات المرفوع من حدیث ابی بکر الصدیق عن الدیلمی ثم قال لایصح وقال ایضا ولا یصح فی المرفوع من کل ہذا الشیٔ والمنقول عن الخضر علیہ السلام عن کتاب موجبات الرحمۃ وعزائم المغفرۃ لابی العباس احمد بن ابی بکر الرداد الیمانی المتصوف بسندفیہ مجاہیل مع انقطاعہ (فلم یصح) والموقوف علی الحسن عن الفقیہ محمد بن سعید الخولانی بسندہ والمنقول عن المشائخ کمحمد بن البابا والمجد احد القدماء من المصریین وبعض شیوخ العراق اوالعجم وابن صالح ومحمد بن ابی نصر البخاری اقوالہم وورد فی فضلہ فی الاول فقد حلت علیہ شفاعتی وفی سائرہا حفظ العین عن الرمد والعمی ودم الالم عنہا ہذا ملخص مافی المقاصد اما حکم ہذا العمل فظاہر وہو انہ ان فعل باعتقاد الثواب الذی لم یثبت دلیلہ کان بدعۃ وزیادۃ فی الدین واکثر من یفعلہ فی زماننا اعتقادہم کذلک فلا شک فی کونہ بدعۃ وان فعل بنیۃ الصحیحۃ البدنیۃ فہو نوع من الطب فیجوز فی نفسہ لکن لو اقصیٰ الی ایہام القربۃ کما ہو المظنون من العوام فی ہذا الزمان یمنع منہ مطلقاً۔

الموضوعات الکبری: (ص: 210، ط: دار الامانۃ)
کلّ مایروی فی ھذا، فلا یصحّ رفعہ الْبَتَّةَ۔

منہاج السنن شرح جامع السنن: (باب مایقول اذا اذن المؤذن، 87/2)
واما تقبیل ظفر الابہامین فقد ذکر فی جامع الرموز وکنزالعباد والفتاویٰ الصوفیہ ان یقول عند السماع الاول من شہادتی الرسالۃﷺ یارسول اللہ وعند الثانیۃ منہا قرۃ عینی بک یارسول اللہ ویقول اللہم متعنی بالسمع والبصر بعد وضع ظفری الابہامین علی العینین فمن فعلہ کان رسول اللہﷺ قائدہ الی الجنۃ وفی کتاب الفردوس من قبل ظفری ابہامیہ عند سماع اشہد ان محمد ا رسول اللہ فی الاذان اناقائدہ ومدخلہ فی الجنۃ انتہیٰ، قالوا لم یصح فی المرفوع فی ہذا شیٔ نعم ورد ذلک فی احادیث مرفوعۃ ضعیفۃ ، فان قیل الحدیث الضعیف یکفی فی الفضائل قلنا انہم اشترطوا فی العمل بالضعیف شروطا منہا ما ذکرہ السیوطی والرملی ان لا یعتقد سنیۃ ذلک الفعل الثابت بالحدیث الضعیف بل یعتقد الاحتیاط، وفی السعایہ فعلیٰ ہذا لو قبل الظفراحتیاطا احیانا فلابأس وان التزمہ واعتقدہ ضروریا یشبہ ان یکون مکروہاً فرب شیٔ مندوب ومباح یکون بالتخصیص والا لتزام مکروہا انتہیٰ قلت وورد فی بعض الروایات فی فضل التقبیل انہ لا یصیبہ الرمد والعمی کما فی المقاصد الحسنۃ للسخاوی ،فعلیٰ ہذا لو قبل للصحۃ البدنیۃ فلابأس ولو قبل رجاء للثواب فلا خیر فیہ ویکون بدعۃ لعدم ثبوت ہذہ الروایات عن النبیﷺ نعم یختص ہذا بالاذان۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 2077 Sep 01, 2021
huzoor sallaho alaihi wassalm ka name sun kar angoothay choomna

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Bida'At & Customs

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2024.