عنوان: عورت کے دودھ سے علاج کرنے کا حکم(108281-No)

سوال: مفتی صاحب ! ایک بچہ جس کی عمر تقریباً 15 سال ہے، وہ معدہ اور جگر کی بیماری میں مبتلا ہے، کوئی دوائی فائدہ نہیں دے رہی، ڈاکٹروں نے والدہ کا دودھ علاج بتایا ہے، کیا یہ بچہ اس عمر میں فیڈر میں والدہ کا دودھ پی سکتا ہے؟

جواب: صورتِ مسئولہ میں مذکورہ بچے کا علاج اگر کسی اور حلال دوائی سے ممکن نہ ہو، تو ایسی صورت میں عورت کا دودھ بطور دوا استعمال کرنے کی گنجائش ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دلائل:

کذا فی الفتاویٰ الہندیۃ:

ولا بأس بأن یسعط الرجل بلبن المرأۃ ویشربہ للدواء۔

(ج:5، ص:355، کتاب الکراہیۃ، الباب الثامن عشر في التداوی والمعالجات، ط: کوئٹہ)

کذا فی فتاویٰ رحیمیہ:
(ج:10، ص:177، ط: دار الاشاعت)

کذا فی فتاویٰ دار العلوم دیوبند:
(رقم الفتوی: 798=732/ د)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Print Full Screen Views: 100

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Medical Treatment

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com