عنوان: میت کو کفن پہنانے کے بعد خون نکلنے سے کفن ناپاک ہوجائے، تو کیا اسے تبدیل جائے گا؟(108527-No)

سوال: مفتی صاحب! میت کوغسل دیا گیا، بعد میں اس کے بدن سے خون بہنے لگا، جس سے کفن نجس ہوگیا، تو کیا کفن بدلنے کی یا دھونے کے ضرورت ہوگی یا نہیں؟

جواب: میت کو غسل دینے اور کفن پہنانے کے بعد اگر میت کے جسم سے خون نکلے اور اس سے کفن ناپاک ہوجائے، تو اس کفن کو دھونے یا تبدیل کرنے کی ضرورت نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
الدلائل:

الفتاوی الشامیۃ: (208/2،ط:دار الفکر)
عن الخزانة إذا تنجس الكفن بنجاسة الميت لا يضر دفعا للحرج بخلاف الكفن المتنجس ابتداء. اهـ. وكذا لو تنجس بدنه بما خرج منه إن كان قبل أن يكفن غسل وبعده لا

الفتاوی التاتارخانیۃ: (12/3،ط:رشیدیۃ)
وإذا غسل المیت ثم خرج منہ شيء لا یعاد الغسل ولا وضوء عندنا… إذا سال منہ شيء بعد الغسل قبل أن یکفن غسل ما سال وإن سال بعد ما کفن لا یغسل۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 201

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Funeral & Jinaza

Copyright © AlIkhalsonline 2021. All right reserved.

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com