عنوان: بیداری کی حالت میں شرمگاہ سے منی یا مذی نکل جانے کا حکم(108606-No)

سوال: مفتی صاحب ! دن میں جاگتے ہوئے شرمگاہ سے منی یا پانی نکل جانے سے غسل واجب ہوگا یا نہیں؟

جواب: اگر بیداری کی حالت میں شرمگاہ سے نکل والا پانی مذی ہو، تو اس سے غسل فرض نہیں ہوگا، البتہ وضو ٹوٹ جائے گا۔
اور اگر بیداری میں شرمگاہ سے نکلنے والا پانی منی ہو، تو اس صورت میں غسل کرنا اس وقت فرض ہوگا، جبکہ منی شہوت کے ساتھ نکلی ہو اور وزن اٹھانے یا کسی بیماری وغیرہ کی وجہ سے نہ نکلی ہو، لہذا اگر منی وزن اٹھانے یا کسی بیماری کی وجہ سے یا اسی طرح کے کسی اور سبب سے بغیر شہوت کے نکلی ہو، تو اس صورت میں غسل کرنا فرض نہیں ہوگا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدرالمختارمع ردالمحتار:(159/1،ط:دارالفکر)
(وفرض) الغسل (عند) خروج (مني) من العضو وإلا فلا يفرض اتفاقا؛ لأنه في حكم الباطن (منفصل عن مقره)۔۔۔۔۔(بشهوة)۔۔الخ
(قوله: بشهوة) متعلق بقوله منفصل، احترز به عما لو انفصل بضرب أو حمل ثقيل على ظهره، فلا غسل عندنا۔۔۔۔الخ

الھندیۃ:(14/1،ط:دارالفکر)
(الفصل الثالث في المعاني الموجبة للغسل وهي ثلاثة) منها الجنابة وهي تثبت بسببين أحدهما خروج المني على وجه الدفق والشهوة من غير إيلاج باللمس أو النظر أو الاحتلام أو الاستمناء.
كذا في محيط السرخسي من الرجل والمرأة في النوم واليقظة. كذا في الهداية

وفیہ ایضاً:(10/1،ط:دارالفکر)
المذي ينقض الوضوء وكذا الودي والمني إذا خرج من غير شهوة بأن حمل شيئا فسبقه المني أو سقط من مكان مرتفع يوجب الوضوء. كذا في المحيط.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 281
beedari ki halat me / mein sharam gaah se / sey money ya mazi nikal jane ka hukum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.