عنوان: بچے کا دل پڑھائی میں کیسے لگے؟(108819-No)

سوال: السلام علیکم، مفتی صاحب ! میرے بچے کا دل پڑھائی میں بلکل نہیں لگ رہا، اس میں بہت بچپنہ ہے، کوئی ترکیب بتائیں، تاکہ اس کا دل پڑھائی میں لگ جائے۔

جواب: واضح رہے کہ اگر بچے کا دل پڑھائی میں نہیں لگ رہا، تو اس کے لئے آپ کو حسنِ تدبیر سے کام لینے کی ضرورت ہے، لہذا ایسی کوئی مناسب تدبیر اختیار کی جائے، جس سے بچے کا دل پڑھائی میں لگ جائے، اور اس کے ساتھ ساتھ صلاۃ الحاجۃ، صدقہ اور بچے کے لئے دعاؤں کا اہتمام بھی کرتے رہیں۔

دلائل:




سنن ابن ماجۃ:(441/1،ط:داراحیاءالکتب العربیۃ)
عن عبد الله بن أبي أوفى الأسلمي، قال: خرج علينا رسول الله صلى الله عليه وسلم فقال: " من كانت له حاجة إلى الله، أو إلى أحد من خلقه، فليتوضأ وليصل ركعتين، ثم ليقل: لا إله إلا الله الحليم الكريم، سبحان الله رب العرش العظيم، الحمد لله رب العالمين، اللهم إني أسألك موجبات رحمتك، وعزائم مغفرتك، والغنيمة من كل بر، والسلامة من كل إثم، أسألك ألا تدع لي ذنبا إلا غفرته، ولا هما إلا فرجته، ولا حاجة هي لك رضا إلا قضيتها لي، ثم يسأل الله من أمر الدنيا والآخرة ما شاء، فإنه يقدر

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 223

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Azkaar & Supplications

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.