عنوان: علاج کے لیے فیزیو تھراپسٹ (Physiotherapist) سے کولہوں پر مالش کروانا(108822-No)

سوال: مفتی صاحب ! مجھے کولہوں میں درد ہوتا ہے، جس کے علاج کے لیے مجھے اپنے کولہے فیزیو تھراپس کے سامنے کھولنے ہوتے ہیں، وہ ان پر تیل کی مالش کرتا ہے، کیا اس کی اجازت ہے؟

جواب: پوچھی گئی صورت میں اگر علاج کے لئے ستر کھولنا ناگزیر ہو، تو بقدرِ ضرورت ستر کھولنے کی اجازت ہوگی، البتہ اس بات کا خیال رہے کہ مرد مرد فیزیو تھراپسٹ سے، اور عورت عورت فیزیو تھراپسٹ سے علاج کروائے۔

دلائل:




الفتاوى الهندية:(330/5،ط:مکتبہ رشیدیہ)
ويجوز النظر إلى الفرج للخاتن وللقابلة وللطبيب عند المعالجة ويغض بصره ما استطاع،۔۔۔۔۔۔۔۔۔امرأة أصابتها قرحة في موضع لايحل للرجل أن ينظر إليه لايحل أن ينظر إليها لكن تعلم امرأة تداويها، فإن لم يجدوا امرأة تداويها، ولا امرأة تتعلم ذلك إذا علمت وخيف عليها البلاء أو الوجع أو الهلاك، فإنه يستر منها كل شيء إلا موضع تلك القرحة، ثم يداويها الرجل ويغض بصره ما استطاع إلا عن ذلك الموضع، ولا فرق في هذا بين ذوات المحارم وغيرهن؛ لأن النظر إلى العورة لايحل بسبب المحرمية۔

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی
Print Full Screen Views: 113

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Medical Treatment

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.