عنوان: دوسرے کی طرف سے عبادت کرنے کا حکم(108862-No)

سوال: میری نانی بوڑھی ہو چکی ہے اور رمضان کے مہینے میں بیماری کی وجہ سے 18 روزے نہیں رکھ سکی، اور اب میری نانی کے جسم میں بوڑھاپے کی وجہسے طاقت نہیں ہے کہ وہ روزہ رکھ سکے، کیا ان کے بجائے میری امی یا میری خالہ رکھ سکتی ہیں؟

جواب: واضح رہے کہ عبادات بدنیہ (نماز، روزہ) میں نیابت جاری نہیں ہوتی ہے، لہذا آپ کی والدہ یا خالہ کا آپ کی نانی کی طرف سے روزے رکھنا جائز نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

سنن النسائی: (رقم الحدیث: 2930)
عن ابن عباس، قال: «لا يصلي أحد عن أحد، ولا يصوم أحد عن أحد ولكن يطعم عنه مكان كل يوم مدا من حنطة»

عمدۃ القاری: (59/11، ط: دار إحياء التراث العربي)
وحجة أصحابنا الحنفية، ومن تبعهم في هذا الباب، في أن: من مات وعليه صيام لا يصوم عنه أحد.....الخ

واللہ تعالیٰ اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 310
dosrey ke taraf se / say ebadat karne ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Sawm (Fasting)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.