عنوان: دوسرے شخص کے پیسوں سے حج کرنے کا ثواب اور اس کے ذمہ سے حج کی فرضیت ختم ہونے کا حکم(108865-No)

سوال: کیا دوسرے آدمی کے پیسوں سے حج ادا کرنے والے بندے کے ذمے سے فرض حج ساقط ہوجاتا ہے اور اس بندے کو حج ادا کرنے کا ثواب ملے گا؟ اور کیا پیسے دینے والے کو بھی ثواب ملے گا؟

جواب: سوال میں ذکر کردہ صورت میں اگر وہ شخص آپ کو یہ پیسے بطور ہدیہ (گفٹ) دے رہا ہے، تو ان پیسوں پر قبضہ کرنے کے بعد آپ ان پیسوں کے مالک بن جائیں گے، اور ان پیسوں کے ذریعے حج ادا کرنے سے آپ پر سے حج کی فرضیت ساقط ہوجائے گی اور آپ کو اس حج پر ثواب بھی ملے گا۔

مزید یہ کہ جس شخص نے آپ کو یہ پیسے ہدیہ کیے ہیں اور حج کرنے میں آپ کی مدد اور معاونت کی ہے، اس معاونت کرنے  والے کو بھی معاونت کرنے کا اجر وثواب ملے گا۔

دلائل:




القرآن الکریم:(سورۃالمائدۃ،الایۃ:2)
وَتَعَاوَنُوْا عَلٰی الْبِرِّ وَالتَّقْوَی، وَلَا تَعَاوَنُوْا عَلٰی الْاِثْمِ وَالْعُدْوَانِ، وَاتَّقُوْا اللّٰہَ، اِنَّ اللّٰہَ شَدِیْدُ الْعِقَابِ....الخ

الفتاوی الھندیۃ:(217/1،ط:دارالفکر)
(ومنها القدرة على الزاد والراحلة) بطريق الملك أو الإجارة دون الإعارة والإباحة سواء كانت الإباحة من جهة من لا منة له عليه كالوالدين والمولودين أو من غيرهم كالأجانب كذا في السراج الوهاج، ولو وهب له مال ليحج به لا يجب عليه قبوله سواء كان الواهب ممن تعتبر منته كالأجانب أو لا تعتبر كالأبوين والمولودين كذا في فتح القدير وتفسير ملك الزاد والراحلة أن يكون له مال فاضل عن حاجته، وهو ما سوى مسكنه ولبسه وخدمه، وأثاث بيته قدر ما يبلغه إلى مكة ذاهبا وجائيا راكبا لا ماشيا وسوى ما يقضي به ديونه ويمسك لنفقة عياله، ومرمة مسكنه ونحوه إلى وقت انصرافه كذا في محيط السرخسي....االفقير إذا حج ماشيا ثم أيسر لا حج عليه هكذا في فتاوى قاضي خان.

الفتاوی الھندیۃ:(374/4،ط:دارالفکر)
ومنھا: ان یکون الموھوب مقبوضا حتی لا یثبت الملک للموھوب لہ قبل القبض.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Hajj (Pilgrimage)

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.