عنوان: رخصتی میں تاخیر کی وجہ سے نکاح ٹوٹنے کا حکم(108986-No)

سوال: میرا نکاح ہوئے سات سال ہوچکے ہیں، لیکن ابھی تک رخصتی نہیں ہوئی، نکاح بھی شرعی تھا، اس وقت میرا شناختی کارڈ نہیں بنا تھا، کیا اتنے سالوں میں جب کہ رخصتی نہیں ہوئی، میرا نکاح باقی ہے یا ٹوٹ چکا ہے؟ جزاک اللہ خیرا

جواب: رخصتی میں تاخیر ہوجانے سے نکاح نہیں ٹوٹتا، تاہم نکاح کے بعد رخصتی جلد کرلینی چاہیے، بلاضرورت اس میں تاخیر نہیں کرنی چاہیے، کیونکہ نکاح کے مقاصد یعنی عفت، پاکدامنی وغیرہ رخصتی کے بعد ہی حاصل ہوسکتے ہیں، اس سے پہلے نہیں۔
ایک حدیث مبارکہ میں ہے: حضورﷺ نے فرمایا: جب تمہیں (اپنی اولاد کے لیے) ایسا رشتہ مل جائے، جس کا اخلاق اور دین تمہارے نزدیک پسندیدہ ہو، تو فوراً شادی کرادو، اگر ایسا نہیں کروگے، تو زمین میں فتنہ اور بڑا فساد برپا ہوگا۔
(سنن ابن ماجہ حدیث نمبر: 1967)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

القرآن الکریم: (النور، الآیۃ: 32)
وَاَنْكِحُوا الْاَيَامٰى مِنْكُمْ وَالصَّالِحِيْنَ مِنْ عِبَادِكُمْ وَاِمَآئِكُمْ ۚ اِنْ يَّكُوْنُوْا فُقَرَآءَ يُغْنِهِمُ اللّٰهُ مِنْ فَضْلِهٖ ۗ وَاللّٰهُ وَاسِعٌ عَلِيْمٌ o

سنن لابن ماجه: (رقم الحدیث: 1967، دار الرسالة العالمية)
عن أبي هريرة، قال: قال رسول الله - صلى الله عليه وسلم -: "إذا أتاكم من ‌ترضون ‌خلقه ودينه فزوجوه، إلا تفعلوه تكن فتنة في الأرض وفساد عريض".

سنن لأبي داود: (389/3، رقم الحدیث: 2046، دار الرسالة العالمية)
عن علقمة، قال: إني لأمشي مع عبد الله بن مسعود بمنى إذ لقيه عثمان فاستخلاه، فلما رأى عبد الله أن ليست له حاجة قال لي: تعال يا علقمة، فجئت. فقال له عثمان: ألا نزوجك يا أبا عبد الرحمن جارية بكرا، لعله يرجع إليك من نفسك ما كنت تعهد؟ فقال عبد الله: لئن قلت ذاك، لقد سمعت رسول الله - صلى الله عليه وسلم - يقول: "من استطاع منكم الباءة، فليتزوج، فإنه أغض للبصر، وأحصن للفرج، ومن لم يستطع منكم، فعليه بالصوم، فإنه له وجاء".

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 238
rukhsati me / may takheer ki waja se / say nikah totne / totney ka hokom / hokum

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Nikah

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.