عنوان: دانتوں پر میل کی تہہ جم جائے، تو کیا اسے دور کئے بغیر غسل ادا ہوجائے گا؟(109021-No)

سوال: غسل میں دانتوں کے اوپر جو سفید میل سا جمع ہو جاتا ہے اور وہ ایک یا دو دفعہ برش کرنے سے نہیں جاتا بہت زیادہ برش کرنے سے صاف ہو جاتا ہے جس میں بہت زیادہ وقت لگ جاتا ہے اور کبھی کبھی مسوڑوں سے خون بھی آجاتاہے۔ تو صرف ایک دفعہ برش کرنے کے بعد اچھی طرح کلی کرنے سے غسل ہو جائےگا؟؟

جواب: ذکر کردہ صورت میں اگر دانتوں کے میل یا داغ کی تہہ ایسے جم گئی ہو کہ سخت چیز سے صاف کرنے سے بھی دور نہ ہوتی ہو، بلکہ خون نکل آتا ہو، تو میل کی ایسی تہہ کو دور کرنا ضروری نہیں ہے، اس لئے کہ وہ دانتوں کا حصہ بن گئی ہے، لہذا میل کی ایسی تہہ پر پانی بہا دینا ہی کافی ہے، ایسا کرنے سے غسل ہوجائے گا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار: (152/1، ط: دار الفکر)
(ويجب) أي يفرض (غسل) كل ما يمكن من البدن بلا حرج مرة كأذن.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 269
danto / tooth per mail ki teh jam jaye,to kia use / usey door kiye baghair ghusal ada hojai / hojaye ga?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.