عنوان: کیا غسل میں کان کے اندرونی حصہ میں پانی پہنچانا اور کان کا میل صاف کرنا ضروری ہے؟ (109030-No)

سوال: مفتی صاحب ! کانوں کے اندر جو میل جمع ہو جاتا ہے، تو غسل میں اس کو کیسے صاف کیا جائے یا صرف اچھی طرح پانی ڈالنے سے غسل ہو جائے گا؟

جواب: غسل میں جس مقام تک آسانی سے بغیر مشقت کے پانی پہنچ جاتا ہو، اس مقام تک پانی پہچانا فرض ہے، لہذا کان کے بیرونی حصہ میں چونکہ پانی آسانی سے پہنچ جاتا ہے، اس لیے بیرونی حصہ میں پانی پہچانا ضروری ہے، جبکہ کان کے سوراخ کے اندرونی حصے میں پانی آسانی سے نہیں پہنچتا، اس لیے کان کے سوراخ کے اندرونی حصے میں پانی پہنچانا اور اس کا میل صاف کرنا، غسل میں ضروری نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

الدر المختار: (152/1، ط: دار الفکر)
(ويجب) أي يفرض (غسل) كل ما يمكن من البدن بلا حرج مرة كأذن.

الهندية: (14/1، ط: دار الفکر)
ويجب إيصال الماء إلى داخل السرة وينبغي أن يدخل أصبعه فيها للمبالغة. كذا في محيط السرخسي.

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص،کراچی

Print Full Screen Views: 278
kia ghusal me / mein kaan / ear ke / kay androni hissey me / mein pani pohonchna or kaan / ear ka mail saaf karna zarori he?

Find here answers of your daily concerns or questions about daily life according to Islam and Sharia. This category covers your asking about the category of Purity & Impurity

Managed by: Hamariweb.com / Islamuna.com

Copyright © Al-Ikhalsonline 2022.